بات ہے سوچ کی

سوچ آدمی کو انتہائی بلندیوں پر پہنچا سکتی ہے
اور
پستی کی گہرائیوں میں بھی پہنچا سکتی ہے
سوچ
درست ہو تو دُشمن بھی دوست بن سکتا ہے
اور
بیمار ہو تو اچھی چیز بھی بُری لگتی ہے
سوچ ایسی نازک چیز ہے جس کے بیمار ہو جانے کا بہت زیادہ خدشہ ہوتا ہے

This entry was posted in روز و شب, طور طريقہ, معلومات on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

4 thoughts on “بات ہے سوچ کی

  1. MD.FAROOQUE

    میں بھی ایک مظلوم اور تبلیغی جماعت کا ستایا ہوا ہوں یہ جماعت اسلام کی دشمن ہے میں ماںگتا کھاتا ہوں آپ بھی مدد کرسکتے ہیں
    برادرشما
    محمد فاروق
    جواب کا منتظر
    الله حافظ

  2. Fatma A Khan

    Mashallah

    Bahot Sahi Farmaya aap ne ke Soch sahi ho to mamlat o khyalat sab hi kuch sahi hota hai. Aur isi natije men insan Deen o Dunia (goke isme koi tafreek nahi hai) ki bulandiyon tak Rasai hasil kar sakta hai. Chahe Allah se love lagane wala mamla ho ya dunyawi taraqqi ka mamla ho. Unchai o Bulandiyon tak pahonch sakta hai
    apni sahi Soch ki wajeh se.

    Aur iske bar qelaf admi ki Soch men Khott o Tedha Pann ho tow sare mamlat Chaopat honge.! Aur apni Galat Soch o Fikar ki waje se pasti ki enteha ko bhi pahoch sakta hai.

    Achai ko eqtyar karne wale aksar kam tadad men hote hyn ba nis bat burai ke jinki har jaga aksariyat hoti hai.

    Soch ke Bimar padne wali bat aap ne bahot sahi kahi Allah ne Quran men Farmaya ke Insan Na shukra o Ujlat pasand o Harees waqe hua hai. Wo chahta hai sab mujh hi ko mil jaye. Yahi Soch Dil o Dimag ko tareh tareh bigaad ti hai. Ke mai hi sab men izzat wala bana rahun. Sablog meri hi izzat karen. Mujh hi ko puchen Mujh hi ko Ahmiyat den. Mai hi har hysiat se bada bana rahun mai hi puja jaun.

    Dusron ke liye kuch nahi sab kuch apne hi liye apni Ana, apne Gurur o Ghamand ki tazkeen k liye. Ye bimar zehen ki soch hai.

    Achi soch o ache qyalat wale ko sab hi log chahenge aur dosti karenge. Waqti taor per uska koi Dushman bhi hoga to woh apne Raqeeb ki achi soch o ache aqlaq se motasir hoker uska jigri dost bhi ban jayga.

    Ramzan ki Nisbath se Ap ki ye Tahreer, Achi Soch aur Gaor o Fikar karne walon ke liye Ma’win sabit ho sakti hai.

    Wassalam
    Fatma A. Khan

  3. افتخار اجمل بھوپال Post author

    بشرٰی خان صاحبہ
    تشریح کا شکریہ ۔ ایک اپنے فعل کی وضاحت کروں گا ۔ میری پوری کوشش ہوتی ہے کہ میری ہر تحریر کے پس مینظر میں قرآن شریف میں درج حُکم یا مشورہ ہو

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)