میرے حقوق ۔ ایک فتنہ

موضوع پر آنے سے پہلے متعلقہ حوالہ پرانے زمانے سے
میں 1950ء میں مسلم ہائی سکول اصغر مال راولپنڈی میں آٹھویں جماعت میں داخل ہوا ۔ بہت جلد چند ہمجاعتوں سے میری دوستی ہو گئی ۔ منصوبہ بنایا گیا کہ ہم سب پیسے ڈال کر رسالہ تعلیم و تربیت لیا کریں اور اس میں دی اچھی باتوں سے مستفید ہوں ۔ یقینی طور پر ہمارے سدھار میں اس رسالے کا اہم کردار رہا ۔ اس رسالے میں ایک کارٹون چھپا کہ
ماں بیٹے سے کہتی ہے ”بات کرنے سے پہلے سوچا کرو“۔
بیٹا کہتا ہے ”اور سوچنے سے پہلے ؟“
ماں کہتی ہے ”یہ کہ سوچنا چاہیئے یا نہیں“۔

کچھ شماروں کے بعد ایک کارٹون چھپا جس میں ماں نے حلوے کی پلیٹ بھر کر میز پر رکھی تو
بیٹا کہتا ہے ”امی ۔ بھائیجان کیلئے اتنا زیادہ حلوہ“۔
ماں کہتی ہے ”یہ تمہارے لئے ہے“۔
بیٹا کہتا ہے ”اتنا کم“۔

کہنے کو یہ دو کارٹون یا لطیفے ہیں مگر مجھے زندگی کے ہر قدم پر یاد رہے ۔ میں نے پچھلی چار دہایئوں میں اکثر لوگوں کو ان دو بچوں کی مانند پایا ۔ اب آتے ہیں موضوع کی طرف

عصرِ حاضر میں حقوق کا بہت چرچا ہے ۔ انسانی حقوق ۔ عورتوں کے حقوق ۔ بچوں کے حقوق ۔ مریضوں کے حقوق ۔ اور ناجانے کس کس کے حقوق ۔ مسئلہ یہ ہے کہ حقوق پورے کسی کے نہیں ہوتے مگر وقت کے ساتھ ان کی تعداد اور قسمیں بڑھتی چلی جا رہی ہیں
حقوق کی تکرار سن سن کر مجھے ٹی وی شروع ہونے سے پہلے کا ریڈیو پاکستان کا ایک پروگرام چوہدری نظام دین یاد آیا
ایک آدمی کہتا ہے ” اخبار میں حقوق کی خبر ہے ۔ یہ حقوق کیا ہوتے ہیں ؟“
دوسرا کہتا ہے ”اگر گاؤں کے سارے حقے ایک جگہ جمع کر دیئے جائیں تو ایک حقوق بن جاتا ہے“۔

میری پریشانی یہ ہے کہ مجھے میرے اُستاذ نے پڑھایا تھا کہ ”جو ایک آدمی کا حق ہوتا ہے ۔ وہ دوسرے آدمی کی ذمہ داری ہوتی ہے ۔ اسلئے اگر ہر آدمی اپنی ذمہ داریاں احسن طریقہ سے پوری کرے تو سب کے حقوق خود بخود پورے ہو جائیں گے“۔

میں نے اپنا سبق یاد رکھا ہے اور اللہ سُبحانُہُ تعالٰی نے میری مدد فرمائی چنانچہ میں نے ہمیشہ اپنی ذمہ داریاں تندہی کے ساتھ پوری کیں ۔ اور نتیجہ یہی ہوا کہ میرے ذہن میں کبھی حق یا حقوق قسم کی کوئی آواز پیدا نہیں ہوئی ۔ میں نے اطمینان کی زندگی گذاری اور گذار رہا ہوں

الحمد للہ میں آج اللہ ہی کی دی ہوئی توفیق سے اپنی ایک چھوٹی سی ذمہ داری کو پورا کرنے میں کامیاب ہوا جو میرے محترم قارئین اور قاریات کا حق ہے

This entry was posted in آپ بيتی, تاریخ, ذمہ دارياں, روز و شب, طور طريقہ, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

One thought on “میرے حقوق ۔ ایک فتنہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)