اسلام آباد کی منصوبہ بندی

بسلسلہ 9 دسمبر 2007ء

فیصلہ ہوا کہ راولپنڈی تحصیل کو مرکزی حکومت کا گھر بنا دیا جائے اور راولپنڈی کے ضلعی دفاتر گوجرخان منتقل کر دیئے جائیں ۔ ان دنوں ٹیکسلا تحصیل نہیں تھی اور ٹیکسلا راولپنڈی تحصیل میں شامل تھا اور واہ چھاونی بھی ۔ اس منصوبہ بندی کے تحت پرانے راولپنڈی شہر کی تعمیرِ نو کی جانا تھی ۔ انگریزوں سے تربیت یافتہ انڈین سول سروس اور ان کے پیروکار پاکستان سنٹرل سروسز [اب سی ایس ایس] کے افسران کو راولپنڈی جیسا شہر چھوڑ کر گوجرخان جانا منظور نہ تھا ۔ چنانچہ اس پر عمل درآمد پر لیت و لعل ہوتا رہا اور اس منصوبہ کے علمبردار فیلڈ مارشل محمد ایوب خان کے کرسی سے ہٹتے ہی اسلام آباد کو اس طرح سے سکیڑا گیا کہ مستقبل میں توسیع کا امکان بھی نہ رہا ۔

اسلام آباد کی منصوبہ بندی شہری منصوبہ بندی کی ایک مشہور یونانی کمپنی نے کی ۔تقریباً ڈیڑھ کلو میٹر مربع کا ہر سیکٹر بنایا گیا ۔ ہر سیکٹر میں لڑکوں اور لڑکیوں کا ایک ایک انٹر کالج جس میں چھٹی سے بارہویں جماعت تک پڑھائی ہو اور ایک بڑی کمرشل مارکیٹ ۔ ہر چوتھائی سیکٹر میں لڑکوں اور لڑکیوں کیلئے ایک ایک پرائمری سکول ۔ ایک چھوٹی مارکیٹ ۔ ایک مسجد اور ایک چلڈرن پارک ہونا تھا ۔ مری کی طرف پہاڑیوں کے دامن میں بہت بڑا علاقہ مکمل رہائشی یونیورسٹیوں کیلئے رکھا گیا جن میں ہر قسم کی تعلیم شامل تھی ۔ اس کے علاوہ سیکٹر جی 8 میں ایک بہت بڑا تعلیمی ہسپتال بننا تھا ۔

ڈویلوپمنٹ شروع کرنے سے پہلے اسلام آباد کے تمام درخت اور جھاڑیاں کاٹ کر ان کی جڑیں بھی نکال دی گئیں ۔ جب سڑکیں بننا شروع ہو گئیں تو کسی کو خیال آیا کہ درختوں کا کیا ہو گا ۔ کسی غلامانہ ذہنیت کے لال بجھکڑ نے رائے دی کہ جنگلی توت کا بیج برطانیہ سے منگوا کر چھوٹے ہوائی جہاز سے چھڑکاؤ کر دیا جائے کیونکہ وہ بہت جلد اُگتا ہے اور تیزی سے پھیلتا ہے ۔ اس توت کو پھل نہیں لگتا ۔ چنانچہ ایسا ہی ہوا ۔ اب اس جنگلی توت کی مہربانی سے پورے اسلام آباد کے باشندے ایک ایسی الرجی میں مبتلا ہو چکے ہیں جو انسان کو زکام اور سانس کی تکلیف میں مبتلا کرتی ہے اور بڑھ کر دمہ کی صورت اختیار کر لیتی ہے ۔ سات آٹھ سال قبل سی ڈی اے نے جنگلی توت کے سارے درخت تلف کرنے کا ٹھیکہ دیا ۔ دو تین سال میں درخت کاٹ دیئے گئے مگر جڑیں نہ نکالی جا سکیں جس کے نتیجہ میں میں جنگلی توت کے درخت اُگ گئے ہیں ۔

ذوالفقار علی بھٹو کے عوامی دور میں سوچا گیا کہ پاکستانی عوام کے بچے پڑھ کر کیا کریں گے اور یہ پارک تو زمین ضائع کرنے کے مترادف ہیں پھر اتنی ساری مساجد کیا کرنا ہیں ۔ اسلئے کئی سکولوں ۔ پارکوں اور مسجدوں کی زمینیں اپنے لوگوں کو مکان اور دکانیں بنانے کیلئے دے دی گئیں ۔ مشرقی طرز پر زیرِ تعمیر وزیر اعظم ہاؤس کو توڑ پھوڑ کر مغربی طرز کا قلعہ نما محل بنایا گیا ۔ شاہراہ قائد اعظم جو کہ ایف ۔ جی 5 سے ایف ۔ جی 17 تک بننا تھی کا نام بدل کر انگریزی نام جناح ایونیو رکھ کر اسے ایف ۔ جی 5 سے ایف ۔ جی 9 تک محدود کر دیا گیا مگر اس کی تعمیر جو ایف ۔ جی 7 تک ہو چکی تھی اس سے آگے نہ کی گئی ۔ ایف 10 میں شاہراہ قائد اعظم کی زمین قائدِ عوام کے چہیتوں میں بانٹ دی گئی ۔ اسلام آباد کی مزید ترقی روک دی گئی ۔ اسلام آباد کا بڑے ہسپتال کا منصوبہ روک دیا گیا ۔ نہ اسلام آباد کی ضلع کچہری بنی نہ دوسرے مرکزی دفاتر اور ان کو مختلف مارکیٹوں پر قبضہ کر کے ان میں بسا دیا گیا ۔ لاڑکانہ کو ترقی دینے کا منصوبہ بنا اور اس پر عمل شروع ہو گیا ۔ اس وقت تک ایف 6 سے 8 اور جی 6 سے 9 تک ڈویلوپ ہو کر بن رہے تھے ۔

اس کے علاوہ لبیا کے معمر قذافی کے نعرہ “بیت لِساکنہُ” یعنی مکان اس کا جو اس میں رہتا ہو کی نقل کرتے ہوئے جیالوں کو سرکاری زمینوں پر راتوں رات قبضہ کا اشارہ ملا جس کے نتجہ میں بہت سی سرکاری املاک انہیں کوڑیوں کے مول دے دی گئی ۔ اس کا ایک نمونہ سب سیکٹر ایف 8/1 میں ہماری رہائش گاہ سے چند قدم کے فاصلہ پر ہے جہاں بچوں کے پارک کی زمین میں سے بہتر حصہ پر پانچ پانچ مرلے کے 10 پلاٹ جیالوں کو دئیے گئے ۔ ان میں سے 7 تو جلد ہی پلاٹ بیچ کر فارغ ہو گئے اور باقی 3 نے مکان بنائے ۔ اب معلوم نہیں وہ ان میں رہ رہے ہیں یا کرائے پر دیئے ہیں یا مکان بیچ کر جا چکے ہیں ۔

جنرل ضیاء الحق کے زمانہ میں ایف اور جی 10 اور ایف 11 کی ڈیویلوپمنٹ شروع ہوئی ۔ ایف 9 پارک ہے ۔ اس کے علاوہ پاکستان انسٹیٹوٹ آف میڈیکل سائینسز بننا شروع ہوا ۔

بینظیر کی حکومت آئی تو سیکٹر آئی 8 جو ریلوے سٹیشن ۔ جنرل بس سٹینڈ اور دیگر مختلف عوامی ضروریات کیلئے مختص تھا رہائشی علاقہ قرار دے کر اپنے مداحوں میں بانٹ دیا اور سیکٹر جی 8 کے وہ خالی پلاٹ جہاں مسجد ۔ پارک یا سکول بننے تھے ان میں سے کچھ پر رہائشی پلاٹ بنا کر مزید لوگوں کو خوش کیا گیا ۔ جو وڈیرے بچ گئے تھے انہیں قائد اعظم یونیورسٹی کی زمین کاٹ کر پلاٹ الاٹ کر دیئے گئے ۔ سیون سٹار سٹینڈرڈ کا وزیر اعظم سیکریٹیریٹ بنایا گیا جس کے نتیجہ میں کسی سیکٹر کی ڈیویلوپمنٹ نہ ہو سکی ۔

نواز شریف کا دور آیا تو جناح ایونیو کو ایف ۔ جی 8 اور 9 کے علاقہ میں مکمل کیا گیا اور دوسری کئی سڑکیں تعمیر ہوئیں جس سے نہ صرف اسلام آباد سے دوسرے شہروں کو جانے میں سہولت ہوئی بلکہ اسلام آباد کے اندر بھی کافی سہولت ہو گئی ۔

موجودہ دور کی کارستانیاں لکھنے کیلئے بہت وقت اور جگہ چاہیئے جس کا میں اپنے آپ کو متحمل نہیں پاتا ۔ صرف تین مثالیں پیش کرتا ہوں ۔ مرگلہ کی خوبصورت پہاڑیوں کے دامن میں نیشنل پارک کے علاقہ میں ایک سیکٹر پر نیوی نے بینظیر بھٹو کے زمانہ میں کالونی بنا لی ۔ اس کے بعد ایئر فورس نے ملحقہ سیکٹر میں کالونی بنا لی اور اب فوج کا جنرل ہیڈ کوارٹر اور جرنیلوں کی رہائش گاہیں بنانے کیلئے دو مزید سیکٹروں پر قبضہ کر لیا گیا ہے اور ان کو پشاور ۔ راولپنڈی ۔ چکلالہ ۔ مری اور لاہور سے ملانے کیلئے سُپر ہائی ویز کی تعمیر شروع ہو چکی ہے ۔

اسلام آباد زیرو پوائنٹ پر شاہراہ کشمیر شاہراہ اسلام آباد کے اوپر سے گذرتی ہے اور شاہراہ سہروردی شاہراہ اسلام آباد کی سطح پر زیرو پوائنٹ سے شروع ہو کر آبپارہ کی طرف جاتی ہے ۔ یہاں پر انٹرسیکشن بنانا اولین منصوبہ بندی کا حصہ ہے ۔ اس چوک کے ایک طرف شکرپڑیاں کی پہاڑی ہے ۔ دوسری طرف نالہ ۔ کھڈ اور قبرستان ۔ تیسری طرف بلند عمارت اور چوتھی طرف زمین ہے ۔ ایک سال قبل صدر جنرل پرویز مشرف کے حکم سے شکرپڑیاں پہاڑی کی قریبی چوٹی پر کروڑوں روپے کے خرچ سے ایک مانومنٹ بنا دیا گیا ہے ۔ اب انٹر سیکشن بنایا جائے تو مانومنٹ گرانا پڑتا ہے یا پھر چوک کو پہاڑی سے دور ہٹایا جائے ۔ پہلی بات یہ ہے کہ جگہ کی ہیئت کی بنا پر یہ ممکن نظر نہیں آتا ۔ اگر ممکن ہو بھی تو چوک منتقل کرنے پر وہاں ملنے والی سب سڑکیں اور پل نئے سرے سے بنانے پڑیں گے جس پر دو سے تین گنا زیادہ خرچ ہو گا ۔

دوسری مثال متذکرہ بالا سُپر ہائی ویز میں سے ایک “ساتویں ایونیو [7th Avenue]” کی ہے جو حال ہی میں مکمل ہوئی ہے ۔ اگر یہ اصل جگہ پر بنائی جاتی تو چوک کے ایک کونے پر کھڑے کلثوم پلازہ کا کچھ حصہ گرانا پڑتا کیونکہ اس پلازہ کا کچھ حصہ مجوزہ سڑک کی زمین پر بنا ہوا ہے ۔ یہ پلازہ سلیم سیف اللہ کی ملکیت ہے جو وفاقی وزیر اور صدر جنرل پرویز مشرف کا خاص آدمی ہے ۔ اسلئے اس سڑک کی جگہ بدلی گئی جس کی وجہ سے اس کی تعمیر پر ساڑھے چوبیس کروڑ کی بجائے 50 کروڑ روپے خرچ آیا ۔

جاری ہے ۔ ۔ ۔

This entry was posted in تاریخ, روز و شب on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

3 thoughts on “اسلام آباد کی منصوبہ بندی

  1. ساجداقبال

    بہت شکریہ انکل۔ کافی کام کی باتیں‌معلوم ہوئیں آپکی اس قسط وار تحریر سے۔ اچھا تو کلثوم پلازہ سلیم سیف اللہ کا ہے۔ :???:

  2. Pingback: What Am I میں کیا ہوں ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ » Blog Archive » اسلام آباد کی ترقی یا لوٹ مار

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)