Category Archives: مزاح

ایک مرد کے سنہری الفاظ

اگر آپ دنیا کو تبدیل کرنا چاہتے ہیں تو جوانی میں کیجئے ۔ شادی کے بعد ٹی وی چینل بھی تبدیل نہیں کر سکیں گے

بیوی کو سُننا کسی ویب سائٹ کے قواعد و ضوابط پڑھنے کی طرح ہے ۔ سمجھ کچھ نہیں آتا لیکن پھر بھی آپ مان لیتے ہیں

دنیا میں صرف شطرنج ایک ایسا کھیل ہے جو خاوند کی حیثیت کو واضح کرتا ہے
بیچارہ بادشاہ ایک وقت صرف ایک قدم چل سکتا ہے جبکہ ملکہ عالیہ جو چاہیں کر سکتی ہیں

سب مرد بہادر ہوتے ہیں ۔ ڈراؤنی فلموں سے نہیں ڈرتے مگر بیوی کی 4 مِسڈ کالز سے ۔ ۔ ۔

مقدر اور نصیب

میں کار میں جا رہا تھا جناح ایوینیو اور نائنتھ ایوینیو والے چوراہے پر بتی سُرخ تھی ۔ رُک گیا ۔ میرے آگے کھڑی کار پر نظر پڑی تو اُس کے پچھلے حصے کی تصویر بنا لی ۔ پڑھیئے کیا لکھا ہے
A Car
مقدّر آزما چکا ہوں ۔ نصیب آزما رہا ہوں
اِک بے وفا کی خاطر ۔ گاڑی چلا رہا ہوں

عوام الناس ۔ خبردار

ٹریفک ڈیپارٹمنٹ
خون دیجئے مگر سڑکوں پر نہیں

محکمہ جنگلات
پرندوں کو شوٹ کیجئے مگر کیمرے سے ۔ بندوق سے نہیں

پٹرول پمپ
”سگریٹ نوشی منع ہے“۔ آپ کی زندگی بیکار ہو گی مگر ہمارا پٹرول قیمتی ہے

ہسپتال
اگر آپ چاہتے ہیں کہ مرنے کے بعد بھی لڑکیوں کی تاک جھانک کرتے رہیں تو اپنی آنکھیں عطیہ کیجئے

حقیقی ٹام اور جیری

بلی اور چوہے کی لڑائی کارٹون “ٹام اور جیری” میں دیکھنے کو بہت ملتی ہے لیکن اصلی بلی اور چوہے کی لڑائی اتفاق سے ہی فلمائی جا سکتی ہے ۔ ایسی ہی ایک نادر وِڈیو


میرا دوسرا بلاگ ” حقیقت اکثر تلخ ہوتی ہے ۔ Reality is often Bitter“۔
” پچھلے 12 سال سے معاشرے کے مختلف پہلوؤں پر تحاریر سے بھر پور چلا آ رہا ہے ۔ اور قاری سے صرف ایک کلِک کے فاصلہ پر ہے ۔ 2010ء ميں ورڈ پريس نے اسے 10 بہترين بلاگز ميں سے ايک قرار ديا تھا

موجودہ ترقی کا شاخسانہ

سُنو ۔ یہ فخر سے اِک راز ہم بھی فاش کرتے ہیں
کبھی ہم منہ دھوتے تھے مگر اب واش کرتے ہیں
تھا بچوں کیلئے بھوسہ مگر اب کِس ہی کرتے ہیں
ستاتی تھیں کبھی یادیں مگر اب مِس کرتے ہیں
چہل قدمی کبھی کرتے تھے ۔ اب واک کرتے ہیں
کبھی کرتے تھے ہم باتیں مگر اب ٹاک کرتے ہیں
کبھی جو امّی ابُو تھے ۔ وہی اب ممی پاپا ہیں
کبھی جو تھا غُسلخانہ ۔ بنا وہ باتھ رُوم آخر
بڑھا جو ایک اور درجہ ۔ بنا وہ واش رُوم آخر
کبھی تو درد ہوتا تھا ۔ مگر اب پین ہوتا ہے
پڑھائی کی جگہ پر ۔ اب تو نالج گین کرتے ہیں