وہ پرنالے سے لٹکتی چھت پر جا پہنچی

فاطمہ صغرٰی مر گئی
ہائیں وہ کون تھی؟
جناب وہ “کون“ نہیں تھی ہم کون ہیں؟
بروز پیر 25 ستمبر 2017ء محترمہ فاطمہ صغرٰی 84 سال کی عمر میں اپنے مالکِ حقیقی سے جا ملیں
یہ وہی فاطمہ صغرٰی تھی جس نے 14 سال کی عمر میں دنیا کے سب سے بڑے سامراج کو آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر یوں للکارا کہ اس کی کڑک آج بھی سُنائی دیتی ہے

قیام پاکستان کی تحریک اپنے آخری مرحلے میں تھی کہ مسلم لیگ نے سول سیکریٹریٹ کے سامنے احتجاج کا اعلان کیا
کمشنر لوئیس نے فرعون کے انداز میں پریس کو بیان دیا کہ سیکریٹریٹ کے سامنے کی سڑک پر مسلم لیگ کو اس دن تک احتجاج نہیں کرنے دوں گا جب تک سیکریٹریٹ پر یونین جیک لہرا رہا ہے

فاطمہ مسلم لیگی جلوس میں شامل تھی اور فرعون کا بیان اس نے بھی سن رکھا تھا جلوس والوں نے تو دفعہ 144 توڑنا تھی لیکن 14 سالہ فاطمہ نے فرعون کا غرور توڑنا تھا۔ کمزور سی فاطمہ نے 10 فٹ اُونچا پھاٹک پھلانگا ۔ ایک سنتری اس کی جانب بڑھا تو فاطمہ نے اپنی انگلیاں اس کی آنکھوں میں کھبو دیں ۔ ابھی وہ اور اس کے ساتھی سنبھلے بھی نہ تھے کہ فاطمہ پرنالے سے لٹکتی چھت پر جا پہنچی یونین جیک کو اُتار پھینکا اور سبز ہلالی پرچم لہرا دیا

چشم فلک نے وہ منظر دیکھا کہ سیکریٹریٹ کے دالان میں کمشنر کھڑا منظر دیکھ رہا تھا ۔ سیکریٹریٹ کے پول پر مسلم لیگ کا پرچم لہرا رہا تھا اور پھاٹک کے باہر پاکستان کا مطلب کیا لاالہ الا اللہ کا نعرہ گونج رہا تھا
اور دنیا کے سب سے بڑے سامراج کا پرچم 14 سالہ فاطمہ صغرٰی کے جوتے کے نیچے پڑا تھا
فاطمہ گرفتار ہوئی جیل گئی لیکن فاطمہ ہمیں بتا گئی کہ وہ “کون“ نہیں تھی ہم کون ہیں؟

This entry was posted in تاریخ, طور طريقہ, معلومات, یادیں on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)