چوتھا Litmus Test

294 بار دیکھا گیا

سورت 49 الحجرات آیۃ 11 ۔ اے لوگو جو ایمان لاۓ ہو ۔ نہ مرد دوسرے مردوں کا مذاق اڑائیں ۔ ہو سکتا ہے کہ وہ ان سے بہتر ہوں ۔
اور نہ عورتیں دوسری عورتوں کا مذاق اڑائیں ۔ ہو سکتا ہے کہ وہ ان سے بہتر ہوں ۔
آپس میں ایک دوسرے پہ طعن نہ کرو اور نہ ایک دوسرے کو برے القاب سے یاد کرو ۔
ایمان لانے کے بعد فسق میں نام پیدا کرنا بہت بُری بات ہے ۔
جو لوگ اس روش سے باز نہ آئیں وہ ظالم ہیں

چنانچہ چوتھا Litmus Test ہے کسی کی کسی بھی قسم کی دِل آزاری نہ کرنا اور دوسرے کو اپنے سے کم تر نہ سمجھنا

This entry was posted in دین, ذمہ دارياں, روز و شب, طور طريقہ, معاشرہ, معلومات on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

2 thoughts on “چوتھا Litmus Test

  1. سیما آفتاب

    جزاک اللہ خیرا

    مجھے اس کے جواب میں ایک جواب موصول ہوا جو من وعن یہاں لکھ رہی ہوں اور آپ سے جواب کی درخواست ہے
    “ان آیات میں جو کہا گیا ہے، وہ یہ ہے:
    1۔مومن مرد و زن، کسی دوسرے مرد و زن کا مذاق نہ اڑائیں
    2۔ ایک دوسرے کو طعنہ نہ دیں
    3۔ ایک دوسرے کو برا نام، برا لقب نہ دیں
    4۔ مومنین فسق میں نام پیدا نہ کریں
    یہ چوتھا لٹمس کسی کی، کسی بھی قسم کی دل آزادی نہ کرنا یہ ان آیات میں کن الفاظ کس مطلب ہے؟ :( یہ تو قرآنی آیات میں “واضح تحریف” اور اپنی مرضی کا مطلب نکالنا یے۔ اس لٹمس کی رو سے تو کوئی مسلمان امر بالمعروف و نہی عن المنکر کر ہی نہیں سکتا۔ اور غالبا” یہی مقصود ہے۔
    مثلا” اگر مجھ میں کوئی خامی ہے۔ اگر کوئی اس کی نشاندہی کرے گا تو میری دل آزاری تو ہوگی۔ شرابی کو شراب پینے سے منع کرو تو وہ خوش ہوگا یا اس کی دل آزاری ہوگی۔ بتوں کی پوجا کرنے والوں کو بت پرستی سے منع کیا جائے تو وہ خوش ہوگا یا ناراض ہوگا۔
    لہذا یہ فلسفہ ہی غلط ہے اور ان آیات میں تو اس کا شائبہ بھی نہیں ہے کہ کسی کی کسی بھی قسم کی دل آزاری نہ کرنا
    واللہ اعلم بالصواب

    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے جب نبوت کے بعد حق کی تلقین و تبلیغ شروع کی تو سرداران قریش بلکہ آپ کے چچا بھی سخت خفا ہوئے دشمنی پر اتر آئے۔ کیا نبی نے ان کی دل آزاری نہیں کی، ان کے معبودوں کو باطل قرار دے کر؟”

  2. Pingback: چوتھا لٹمس ٹیسٹ | ღ کچھ دل سے ღ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)