امریکہ میں مُفت کھانا کھلانے والا پاکستانی ریستوراں

ریاستہائے متحدہ امریکہ (USA) کے دارالحکومت واشنگٹن میں منّان (ایک پاکستانی امریکن) بڑی سادگی سے اپنے مُلک پاکستان کا نام روشن کر رہا ہے ۔ وائٹ ہاؤس سے بمُشکل ایک کلو میٹر کے فاصلہ پر واقع ایک چھوٹا سا ریستوراں چلانے والے منّان کو واشنگٹن کے باسی ”مسیحا“ ۔ ”فرشتہ“ اور ”ہیرو“ کہتے ہیں ۔ سی این این ۔ اے بی سی ۔ وائس آف امریکہ اور واشنگٹن پوسٹ سمیت چوٹی کے ذرائع ابلاغ منّان کو ”مثالی تارکِ وطن(model immigrant)“ اور کامیاب مثال (success story) کہتے ہیں ۔ منّان کا دِل پاکستان کے ساتھ دھڑکتا ہے ۔

صرف 3 ڈالر لئے منّان جب امریکہ پہنچا تھا تو کبھی خواب میں بھی نہیں دیکھ سکتا تھا کہ ایک دن ذرائع ابلاغ میں اُس کے چرچے ہوں گے اور وہ امریکہ کے سینیٹروں (Senators)۔ کانگرسمین (Congressmen)۔ ججوں اور نامور لوگوں حتٰی کہ سابقہ صدر ہیلری کلِنٹن کے ساتھ کھانا کھائے گا (سُبحان اللہ و بحمدہِ) ۔ منّان کا کہتا ہے ”میں دنیا کی نظروں میں اپنے وطن اور اپنے دین کا تخیّل بہتر بنانا چاہتا ہوں اور اُنہیں بتانا چاہتا ہوں کہ ہم مسلمان پاکستانی ہمدرد اور پیار کرنے والی قوم ہیں“۔

واشنگٹن میں غیر مُلکی کھانوں کے سینکڑوں ریستوراں ہیں لیکن ”سکِینہ حلال گرِل (Skina)“ کی عزت امریکنوں کے دِل میں سب سے Hlal Restaurantزیادہ ہے ۔ اس ریستوراں کی چِکن کڑاہی ۔ بَٹَر چِکن (Butter Chicken) اور بریانی پسندیدہ ہیں لیکن منّان کی فراخ دِلی بہت ہر دِل عزیز ہے

سکِینہ حلال ریستوراں میں کھانے کیلئے ہر قسم کے لوگ آتے ہیں لیکن اِس کا طُرّہ امتیاز یہ ہے کہ یہاں غُرباء ۔ نادار اور بے گھر لوگوں کو بلامعاوضہ کھانا کھلایا جاتا ہے اور ریستوراں کے خدمتگار (waiters) اُنہیں ڈائیننگ ہال (Dining Hall) میں اُسی طرح کھانا کھلاتے ہیں جیسے پیسے دے کر کھانے والوں کو کھلاتے ہیں ۔

منّان پاکستان میں جہلم کے ایک چھوٹے سے گاؤں ”کری شریف“میں پیدا ہوا ۔ اُس کا باپ راج مزدور کے کام کی تلاش میں لبیا چلا گیا ہوا تھا ۔ ماں مویشی پالتی اور اُن کا دودھ بیچتی ۔ منّان نے 12 سال کی عمر میں گلیوں میں سبزیاں بیچ کر ماں کا ہاتھ بٹانا شروع کیا ۔ 1996ء میں 25 سال کی عمر میں منّان امریکہ پہنچا اُس نے پٹرول پمپوں ()۔ کاروں کی ورکشاپوں اور لیبارٹریوں میں کام کیا غرضیکہ دن رات محنت کی اور اپنے گھر والوں کو پیسے بھیجتا رہا ۔

منّان بتاتا ہے کہ اُس نے ریستوراں اپنی پیاری ماں ”سکِینہ“ کی یاد میں کھولا ۔ بچپن میں اُس کی ماں نے اُسے ھدائت کی تھی ”خواہ تم کتنے ہی غریب ہو جو کچھ تمہارے پاس ہو اس میں دوسروں کا بھی حصہ رکھنا ۔ اللہ تمہاری مشکلیں آسان کرے گا“۔

منّان اپنے ریستوراں پر سالانہ 6000 غیریبوں کو مُفت کھانا کھلاتا ہے ۔ کوئی بھی غریب ۔ نادار یا غریب الوطن اُس کے ریستوراں میں مُفت کھانا کھا سکتا ۔ منّان کسی سے چُوں و چرا نہیں کرتا ۔

منّان کی محنت کے عِوض اللہ سُبحانُہُ و تعالٰی نے اُسے خُوب نوازہ ہے ۔اُس کی ماں کی نصیحت سچ ثابت ہوئی ہے ۔ ریستوراں کا کاروبار چل پڑا تو جلد ہی منّان ایک لِیموزین (Limousine) کا مالک بن گیا جس میں وہ اپنے گاہکوں سیر کراتا ۔ اب اُس کے پاس لِموزین کاروں کا ایک بیڑا (fleet) ہے ۔ منّنان کے کام پر اب 30 ملازمین ہیں ۔

منّان کا یقین پُختہ ہو چکا ہے کہ جب وہ غریبوں کو کھانا کھلاتا ہے تو اللہ دیکھ رہا ہوتا ہے ۔ اُس کا یہ بھی کہنا ہے کہ کسی کا مُسکراہٹ سے استقبال بھی برکت کا ذریعہ بنتا ہے ۔ جب منّان نے ریستوراں کھولا تو ایک باغیچہ (Park) میں جا کر نادار لوگوں کو اکٹھا کیا اور اپنے ریستوراں پر لا کر کہا”یہاں پر کوئی غریب ۔ نادار یا غریب الوطن بغیر معاوضہ کھانا کھا سکتا ہے“۔ منّان بتاتا ہے ”سب کے چہروں پر حیرانی چھا گئی لیکن اُن کی مطمئن آنکھوں نے مجھے سکُون بخشا“۔

اُس کی دریا دِلی کے باعث اللہ نے منّان کو ہر دلعزیز بنا دیا ہے ۔ منّان کا کہنا ہے کہ اُس نے کبھی محسوس نہیں کیا کہ کوئی اُس کی پیشکش کا ناجائز فائدہ اُٹھا رہا ہے ۔ عام طور پر لوگ ایسا نہیں کرتے ۔ منّان کا یقین ہے کہ اگر کوئی اللہ کی راہ میں خرچ کرے تو اللہ اُس کا نگہبان ہوتا ہے
منّان اپنے مہمانوں کو پاکستان کے خوبصورت علاقوں کی وِڈیوز بھی دکھاتا ہے ۔ منّان کی بیوی اور دو بچے ہیں جو پاکستان میں ہیں ۔ منّان نے پاکستان میں 200 یتیم بچوں کیلئے ایک سکول بھی شروع کیا ہے ۔ (اللہ جسے توفیق دے)

This entry was posted in روز و شب, سبق, طور طريقہ, معاشرہ, معلومات on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

One thought on “امریکہ میں مُفت کھانا کھلانے والا پاکستانی ریستوراں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)