انسانی بوالعجمیاں

یہ کیا کہ سورج پہ گھر بنانا اور اُس پہ چھاؤں تلاش کرنا
کھڑے بھی ہونا تو دَلدَلوں پہ ۔ پھر اپنے پاؤں تلاش کرنا
نِکل کے شہر میں آ بھی جانا چمکتے خوابوں کو ساتھ لیکر
بلند و بالا عمارتوں میں ۔ پھر اپنے گاؤں تلاش کرنا
کبھی تو بیعت فروخت کر دی ۔ کبھی تمثیلیں فروخت کر دیں
میرے وکیلوں نے میرے ہونے کی سب دلیلیں فروخت کر دیں
وہ اپنے سورج تو کیا جلاتے ۔ میرے چراغوں کو بیچ ڈالا
فراک اپنے بچا کے رکھے ۔ میری سبیلیں فروخت کر دیں
خدا ہیں لوگ گناہ و ثواب دیکھتے ہیں
ہم تو روز ہی روز حساب دیکھتے ہیں
کُچل کُچل کے فُٹ پاتھ کو ۔ نہ چلو اِتنا
یہاں پہ مزدور رات کو خواب دیکھتے ہیں
(کلام ۔ سلمان)

This entry was posted in روز و شب, طور طريقہ, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

3 thoughts on “انسانی بوالعجمیاں

  1. سیما آفتاب

    جی تو اور کیا ۔۔۔ کہتی ہوں سچ کہ جھوٹ کی عادت نہیں مجھے :)
    حاصل کو چھوڑ کر لاحاصل کے پیچھے اپنی زندگی لگا دیتا ہے اور پھر کہتا ہے ‘یہ نہیں ملا، وہ نہیں ملا” ۔۔۔ ور جو ملا تھا اس کی قدر نہ کی۔ ۔۔ ایسا ہی تو ہے انسان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)