تنازعہ جموں کشمیر کی بنیاد ؟ ؟ ؟

جب برطانوی حکمرانوں نے مسلمانانِ ہِند کا مطالبہ مان لیا اور ہندوؤں کی نمائندہ سیاسی جماعت آل انڈیا کانگریس بھی راضی ہو گئی تو فیصلہ ہوا کہ ہندوستان کی تقسیم صوبوں کی بنیاد پر ہو گی جس کے مطابق 5 صوبے جہاں مسلمان اکثریت میں تھے (پنجاب ۔ سندھ ۔ سرحد ۔ بلوچستان اور بنگال) پاکستان میں شامل ہوں گے اور ریاستیں اپنی اپنی آبادی کی بنیاد پر فیصلہ کریں گی ۔ بعد میں برطانوی حکومت نے ہندوؤں کا مطالبہ مانتے ہوئے پنجاب اور بنگال کی تقسیم کا اعلان کر دیا
کافی بحث و تمحیص کے بعد فیصلہ ہوا کہ پنجاب اور بنگال کی تقسیم کیلئے کم از کم اکائی ضلع ہو گی

انگریز حکمرانوں نے پاکستان کی سرحدوں کا اعلان (ریڈ کلِف ایوارڈ) عیّاری کرتے ہوئے 14 اگست 1947ء کو نہ کیا بلکہ 3 دن بعد 17 اگست 1947ء کو کیا جس میں طے شدہ اصول کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مسلم اکثریتی علاقہ جس میں ضلع گورداسپور کا بڑا علاقہ مع تحصیل پٹھانکوٹ شامل تھا بھارت کا حصہ بنا دیا ۔ اس طرح جواہر لال نہرو کی خواہش پوری ہو گئی اور بھارت کو جموں کشمیر جانے کے لئے زمینی راستہ مہیا ہو گیا ۔ اس کا دوسرا بُرا نتیجہ یہ ہوا کہ متعلقہ مُسلم اکثریتی علاقوں میں تسلّی سے اپنے گھروں میں بیٹھے مسلمانوں کا قتل عام ہوا
پٹھان کوٹ کٹھوعہ کے راستے بھارتی فوج کی سرپرستی میں راشٹریہ سیوک سَنگ ۔ ہِندُو مہاسِبھا اور اکالی دَل کے تربیت یافتہ مسلّح دستے بھاری تعداد میں جموں میں داخل ہونا شروع ہو گئے
سُنا گیا تھا کہ متفقہ اصول کے خلاف اس غلط فیصلہ کا سبب ہندوستان میں آخری وائسرائے لارڈ مؤنٹ بیٹن کی بیوی اور جواہر لال نہرو کی گہری دوستی تھی جس کی جھلکیاں یہاں کلِک کر کے دیکھی جا سکتی ہیں

کچھ تاریخی حقائق ۔
1947ء سے قبل ہونے والی مردم شماری کے مطابق صوبہ پنجاب کے 7 ایسے شہر تھے جن کی آبادی 100000 سے زیادہ تھی ۔ لاہور 630000 ۔ امرتسر 390000 ۔ راولپنڈی ۔ ملتان ۔ سیالکوٹ ۔ لُدھیانہ اور جالندھر کی آبادی 100000 اور 200000 کے درمیان تھی ۔ punjab-religions-19411 ان سب میں مسلمان اکثریت میں تھے ۔ صرف راولپنڈی شہر اور جالندھر شہر میں سارے غیر مُسلموں کو جمع کیا جائے تو اُن کی اکثریت بن جاتی تھی ۔ یہ شہروں کے اعداد و شمار ہیں ضلعوں کے نہیں ۔ ان سب ضلعوں میں مسلمان بھاری اکثریت میں تھے

پورے صوبہ پنجاب میں مسلمان 53 فیصد ۔ ہندو 30 فیصد ۔ سکھ 6ء14 فیصد ۔ عیسائی 4ء1 فیصد اور باقی 1 فیصد تھے

صوبہ پنجاب کو 5 حصوں میں تقسیم کیا جا سکتا تھا ۔ (1) مغربی حصہ (سبز اور گہرا سبز) 80 سے 90 فیصد مسلمان ۔ (2) وسط مغربی حصہ (سیاہی مائل سبز) 60 فیصد کے قریب مسلمان اور سکھ بڑی اقلیت تھے ۔ (3) وسطی مشرقی حصہ (نیلا اور گہرا نسواری) مسلمان اکثریت میں تھے لیکن تمام غیر مُسلموں کو جمع کیا جائے تو 50 فیصد سے کچھ زیادہ ہو جاتے تھے ۔ (4) جنوب مشرقی حصہ ( براؤن اور سرخی مائل براؤن) ۔ اب ہریانہ کہلاتا ہے ۔ اس میں ہندو معمولی اکثریت میں تھے اور سکھ بہت کم تھے ۔ دہلی بھی اس میں شامل ہے ۔ (5) شمال مشرقی حصہ (سُرخ اور گہرا سُرخ) ۔ اب ہماچل پردیش کہلاتا ہے ہندو اکثریتی علاقہ تھا ۔
greater-punjab-religions-today
ریڈ کلِف ایوارڈ جس کا اعلان 14 اگست کے چند دن بعد (17 اگست ) ہوا کے ذریعہ تمام متفقہ اصولوں کو بالائے طاق رکھتے ہوئے مندرجہ ذیل تقسیم کی گئی
(1) مغربی پنجاب جو پاکستان کو دیا گیا (سبز)
(2) مشرقی پنجاب جو بھارت کو دیا گیا (سبز چھوڑ کر باقی سارا)
مصنّف لکھتا ہے
“To my eyes, this looks like an extremely favorable result for India. No Hindu/Sikh majority district went to Pakistan, while several swaths of Muslim majority territory ended up in Indian hands.”
تفصیل یہاں کلِک کر کے پڑھی جا سکتی ہے

This entry was posted in تاریخ, تحريک آزادی جموں کشمير, سیاست, معلومات, منافقت on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)