جو کسی ٹی وی نے نہیں دکھایا

غزہ پر اسرائیل کے حملے کی کچھ جھلکیاں تو سب نے دیکھی ہوں گی لیکن اتنی مکمل صورتِ حال کسی ٹی وی نے نہیں دکھائی ۔ اصل صورتِ حال کا اندازہ کرنے کیلئے نیچے وڈیو دیکھیئے جو 22 نومبر 2012 کو رات 9 بج کر 58 منٹ پر فیس بک پر لگائی گئی ہے

اسرائیل کی اس وحشت بھری اور انسانیت سوز کاروائی کو انسانی حقوق کی علمبردار مغربی دنیا اسرائیل کا حق قرار دے رہی ہے ۔ قارئین خود ہی فیصلہ کریں کہ دنیا میں دہشتگرد کون ہے اور دہشتگردوں کو پالنے والے کون

This entry was posted in معلومات on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

6 thoughts on “جو کسی ٹی وی نے نہیں دکھایا

  1. کوثر بیگ

    یہ دیکھنے کے بعد دل سے مسلسل آہ نکلتی ہے ۔کہتے ہیں دل سے جو آہ نکلتی ہے اثر رکھتی ہے پھر ہم سب کی آہ یوں بے اثر کیوں ہورہی ہے کیا کمی ہے کیا وجہہ ہے ۔۔اللہ دشمنِ مسلمان کےلئے بہت کچھ کہنے منہ پر آرہا ہے مگر ہم تو اللہ ہی کو سناتے ہیں اسی سے بدلا، رحم مانگتے ہیں اور اسی کے ہاتھ سب کچھ ہے۔۔۔

  2. میرا پاکستان

    دنیا میں‌ طاقتور اور کمزور کی جنگ جنگ نہیں ہوتی۔ یہ کیا کہ آپ طاقتور ہیں، اوپر سے نہتے لوگوں پر بم برساتے ہیں اور وہ بے بس طاقتور کر گالیاں دیتے ہوئے آگ بجھاتے ہیں، لاشیں سمیٹتے ہیں اور آہ و بکاہ کرتے ہوئے سو جاتے ہیں۔ مقابلہ تو تب ہو جب دونوں کی طاقت برابر ہو۔ دونوں کے جہاز ہوا میں‌ لڑیں، دونوں کے علاقوں میں بم برسائیں اور پھر فیصلہ کریں کہ کون طاقتور ہے۔

  3. افتخار اجمل بھوپال Post author

    افضل صاحب
    آپ نے درست کہا ہے ۔ میرا خیال ہے کہ طاقتور اپنی شکست کی خفت مٹانے کیلئے ظلم و تشدد پر اُتر آتا ہے ۔ ان بے کس اور بے بس لوگوں پر ظلم و تشدد کے 68 سال گذر گئے ہیں اور اس کی پشت پناہی دنیا کی بڑی طاقتیں کرتی ہیں لیکن فلسطین ختم نہیں ہوئے ۔ دوسری طرف بغیر فلسطینیوں کی مداخلت کے امیکا میں آوازیں اٹھنا شروع ہو گئی ہیں ہمیں علیحدہ کرو

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)