چھوٹی چھوٹی باتیں ۔ محکمانہ انصاف

روائت ہے کہ دوسری جنگ عظيم ميں برطانيہ فاتح تو رہا مگر مُلکی معيشت کا ديواليہ نکل گيا تھا ۔ چند فکر رکھنے والے لوگوں نے وقت کے وزيرِ اعظم کے پاس جا کر اپنی تشويش ظاہر کی

وزيرِ اعظم نے پوچھا “سرکاری محکمے انصاف کر رہے ہيں ؟”
وہ بولے “ايسا ہو رہا ہے”
پھر وزيرِ اعظم نے پوچھا “لوگ سمجھتے ہيں کہ انصاف مل رہا ہے ؟”
وہ بولے ” جی ۔ بالکل”
وزيرِ اعظم نے کہا ” پھر کوئی فکر کی بات نہيں سب ٹھيک ہو جائے گا”

تاريخ گواہ کہ سب ٹھيک ہو گيا ۔ يہ کرامت ہے جمہوريت کی ۔ ہمارے ملک ميں بھی سُنا ہے کہ جمہوريت ہے ۔ ميں نے تو بہت تلاش کی مگر وہ شايد مجھ سے پردہ کرتی ہے اسلئے نظر نہيں آئی ۔ ليکن ميں بات کروں کا “اصلی تے وڈی” جمہوريت کی جس کا نام عوامی جمہوريت تھا اور جس کی عظمت کے نعرے آج بھی لگائے جاتے ہيں

خود ساختہ قائدِ عوام نے1973ء ميں انتظامی اصلاحات [Admnistrative Reforms] کے نام پر سرکاری ملازمين کيلئے نئے قوانين نافذ کئے ۔ نعرہ لگايا گيا تھا کہ” ڈکٹيٹروں نے 4 کلاسز [Classes] بنا رکھی ہيں ۔ ميں سب کو ايک کلاس کر دوں گا اور پھر چپڑاسی بھی فيڈرل سيکريٹری بن سکے گا”۔ مگر 4 کی بجائے 23 کلاسز بنا دی گئيں ۔ چپڑاسی تو کيا فيڈرل سيکريٹری بنتا ۔ ڈپٹی سيکريٹری کيلئے بھی فيڈرل سکريٹری بننا مشکل بنا ديا گيا ۔ البتہ بادشاہ سلامت جب چاہتے جسے چاہتے چپڑاسی کی کرسی سے اُٹھا کر فيڈرل سيکريٹری بنا ديتے اور جو فيڈرل سيکٹری حکم عدولی کرتا اسے ايسا ہٹاتے کہ نہ پنشن نہ گريچوئيٹی ملتی ۔ چنانچہ ايک ايسے ہی فيڈرل سيکريٹری نے بھوک ننگ سے تنگ آ کر اپنے بيوی بچوں کو ہلاک کرنے کے بعد خود کُشی کر لی ۔ يہ تو بڑی بڑی باتيں ہيں ۔ انتظامی اصلاحات نافذ ہونے والے بے شمار واقعات ميں سے ميں اُس ادارے کے اعلٰی انصاف کے صرف 3 واقعاتِ سپردِ قلم کر رہا ہوں کہ ميں جس ميں ملازم تھا ۔ ان ميں سے تيسرا واقعہ سب سے بُلند ہے

پہلا واقعہ ۔ سعودی عرب کے ايک اعلٰی عہديدار 1970ء کی دہائی کے اوائل ميں گريڈ 18 کے کچھ انجنير ہمارے ادارے سے لينے کيلئے آئے ۔ اُنہيں انٹرويو نہ کرنے ديا گيا اور کچھ گريڈ 19 اور ايک گريڈ 17 کا انجينئر دے ديا گيا ۔ ان ميں سے ہر ايک نے ملازمت کے ذاتی کنٹريکٹ پر دستخط کئے اور تين تين سال کی بغير تنخواہ چھٹی لے کر چلے گئے جس کی بعد ميں ناجانے کس قانون کے تحت 9 سال تک روسيع ہو گئی ۔ سعودی عرب ميں يہ لوگ سعودی انٹظاميہ کے ماتحت تھے اور سعودی عرب سے ہی براہِ راست تنخواہ ليتے تھے ۔ اس کے باوجود گريڈ 17 والے انجنيئر وہيں بيٹھے گريڈ 18 اور پھر گريڈ 19 ميں ترقی پا گئے اور 9 سال بعد واپس آنے پر انہيں گريڈ 20 پر ترقی دے دی گئی ۔ قانون يہ ہے کہ جو شخص ملک سے باہر ہو اس کی ترقی واپس آنے پر ہو گی

دوسرا واقعہ ۔ 4 انجنيئروں کو 1976ء ميں لبيا بھيجا گيا جن ميں ايک گريڈ 17 کا اور باقی 3 گريڈ 18 کے تھے ۔ انہيں تنخواہ پاکستان کا سفارتخانہ ديتا تھا جس ميں سے جی پی فنڈ ۔ پنشن کنٹری بيوشن اور سروس چارجز کاٹ لئے جاتے تھے ۔ يہ لوگ انتظامی لحاظ سے پاکستان ميں اپنے ادارے کے ماتحت تھے جو سفارتخانے کی معرفت انہيں احکامات بھيجتا تھا ۔ ان ميں جو انجيئر سب سے سينئر تھا اُسے يہ کہہ کرترقی نہ دی گئی کہ مُلک سے باہر ہے جب واپس آئے گا تو ديکھا جائے گا اور اس طرح 6 سال کے اندر 24 اس سے جونيئر انجيئروں کو ترقی دے دی گئی ۔ بايں ہمہ جو انجيئر گريڈ 17 ميں تھا اسے لبيا ميں بيٹھے بٹھائے پہلے گريڈ 18 اور پھر گريڈ 19 ميں ترقی دے دی گئی اور وہ اپنی ٹيم کے سب سے سينئر سے سينئر ہو گيا

تيسرا واقعہ اور بھی نرالا ہے ۔ ايک گريڈ 16 کے افسر چھٹی لے کر گئے اور واپس نہ آئے ۔ کئی سال اُن کو بُلايا جاتا رہا مگر کوئی جواب نہ آيا ۔ وہ ليبا چلے گئے ہوئے تھے اور وہاں کسی پرائيويٹ کمپنی کی ملازمت کر رہے تھے ۔ کيس چلتا رہا اور کوئی جواب نہ آنے پر اُنہيں مفرور [absconder] قرار دے ديا گيا [وزارتِ دفاع کا مفرور] ۔ مزيد چند سال گذر گئے تو اُن کی گريڈ 17 ميں ترقی کا نوٹی فيکيشن جاری ہو گيا جبکہ اُس وقت بھی وہ مفرور تھے

سُنا تھا کہ “جادو وہ جو سر چڑھ کے بولے”۔ ہمارے مُلک ميں “انصاف وہ جو سر پھوڑ کے بولے”

This entry was posted in تاریخ, روز و شب, طور طريقہ, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

1 thought on “چھوٹی چھوٹی باتیں ۔ محکمانہ انصاف

  1. Pingback: Tweets that mention What Am I میں کیا ہوں ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ » Blog Archive » چھوٹی چھوٹی باتیں ۔ محکمانہ انصاف -- Topsy.com

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)