کھری کھری سُنا ديں

دس بارہ سال قبل جو حالت تھی عوام اُس سے بھی خوش نہ تھے مگر اُس کے مقابلے ميں آج جو حالت ہے اُس کا اندازہ ميں اس سے لگاتا ہوں کہ 1999ء ميں چکی کا آٹا يعنی مکمل گندم چھوٹی چکی پر پِسی ہوئی 10 روپے فی کلو گرام اور ايک سال پرانے چاول سُپر باسمتی 25 روپے فی کلو گرام خريدتا تھا ۔ اب وہی آٹا 35 روپے اور وہی چاول 90 سے 110 روپے ميں خريدتا ہوں

چاروں طرف شور مچا ہے “حُکمران چور ۔ حُکمران کھا گئے ۔ حُکمران کچھ نہيں کرتے”۔ اس شور کو سُن کر مجھے يہ کہانی ياد آتی ہے جو کسی بزرگ نے تين دہائياں قبل سنائی تھی

ہمارے لوگوں کا شغف ہے کہ حکومت کو جب تک بُرا نہ کہا جائے حُب الوطنی اور ذہانت ثابت نہيں ہوتی ۔ ايک محفل ميں اسی طرح حکومت کو باری باری کوسا جا رہا تھا کہ آخر ميں چوہدری صاحب بولے “ميں نے تو ڈی سی کو کھری کھری سُنا ديں”

سب انگشت بدنداں رہ گئے ۔ ايک شخص جو خاموش بيٹھا سب کی باتيں سُن رہا تھا بولا “چوہدری صاحب ۔ اگر آپ پھر کبھی ڈی سی کے پاس جائيں تو مجھے ضرور بتائيں”

اگلے ماہ چوہدری صاحب نے اُسے بتايا اور وہ وقت مقررہ پر چوہدری صاحب کے گھر پہنچ گيا ۔ چوہدری صاحب اُسے ساتھ لے کر ڈی سی کے دفتر کے پچھلی طرف پہنچے ۔ شام کے چھ بجے تھے وہاں کوئی آدم زاد نہ تھا ۔ چوہدری صاحب نے ڈی سی پر لعن طعن شروع کی حتٰی کہ گالی گلوچ تک پہنچ گئے ۔ وہ شخص حيران و پريشان ديکھتا رہا ۔ جب چوہدری صاحب تھک گئے تو اُس شخص سے کہنے لگے “چلو چليں”
اُس شخص نے کہا “چوہدری صاحب ۔ يہاں تو کوئی بندہ ہے نہ بندے کی ذات ۔ آپ نے گالياں کس کو دی ہيں ؟”
چوہدری صاحب جھٹ سے بولے ” کيا تم چاہتے ہو کے ميں ڈی سی کو اُس کے سامنے گالياں دوں ؟ مجھے اندر کروانا ہے ؟”

This entry was posted in روز و شب, طور طريقہ, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

11 thoughts on “کھری کھری سُنا ديں

  1. محمدوقاراعظم

    واہ جی واہ، آپ نے تو ہمارے قومی مزاج کی بہت اچھی منظر کشی کی ہے۔ ساری قوم چوہدری صاحب کے نقش پاء پرہی چل رہی ہے۔ :roll:

  2. ہیلو۔ہائے۔اےاواے

    محترم بھوپال صاحب آپکا یہ بلاگ واقعی بہت پسند آیا اور تبصرہ کرنے کو جی چاہ رہا ہے ۔ پرسنل نہ ہونے کے وعدے کے ساتھ آپ سے بھی توقع ہے کہ آپ بھی ٹالریٹ کرینگے اور ایسا اب تک آپ کر بھی چکے ہیں ۔

  3. افتخار اجمل بھوپال Post author

    اسر خوامخواہ جاپانی و محمدوقاراعظم صاحبان
    حوصلہ افرازی کا شکريہ ۔ ہو سکے تو دعا کيجئے کہ اللہ مجھے صراط مستقيم پر قائم رکھے

  4. پھپھے کٹنی

    انکل آپ کو کيسے پتہ چلا آپ صراط مستقيم پر ہيں ميں نے بھی اپنے صراط کا پتہ چلانا ہے مستقيم يا منحني، پل صراط پر پہنچنے سے پہلے پہلے

  5. پھپھے کٹنی

    وہ کيا اکثر ذکر ہوتا ہے کہ روز قيامت بال کی طرح باريک پل سے گزر کر جانا ہو گا اسکا نام پل صراط نہيں تھا کيا؟ يا ميں بھول گئی ہوں آپ بتا ديں امی سے پوچھوں گی تو پہلے ايک تقرير سننی پڑے گی

  6. افتخار اجمل بھوپال Post author

    اسماء بتول صاحبہ
    عِلم حاصل کرنے کيلئے بڑے خطرے مُول لينا پڑتے ہيں ۔اور آپ اپنی اماں سے ڈر رہی ہيں ۔ اتنی دور بيٹھے وہ آپ کو ڈنڈا تو مار نہيں سکتيں کيا اُن کا باتيں کرنا بھی آپ کی برداشت سے باہر ہے ؟ ماں کے پاؤں کے نيچے جو جنّت ہے وہ کيسے ملے گی ؟ پُل صراط والی بات ميں نے کسی کتاب ميں نہيں پڑھی اور نہ ميری اماں نے مجھے کوئی ايسی بات بتائی ۔ ميری بيوی نے بھی مجھے ايسی کوئی بات نہيں بتائی ۔ اب ميں آپ کو کيا بتاؤں ؟

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)