چھوٹی چھوٹی باتیں ۔ اِن شَاء اللہ

اِن شَاء اللہ کا مطلب ہے اگر اللہ نے چاہا ۔ ظاہر ہے کہ اللہ صرف اچھی بات چاہتا ہے ۔ ہمارے ہاں گفتگو ميں اِن شَاء اللہ کا استعمال کرتے ہوئے اس حقيقت کو بالکل فراموش کر ديا جاتا ہے

کچھ لوگ کسی کو بد دعا ديتے ہوئے يا بُرا کہتے ہوئے بھی ساتھ اِن شَاء اللہ کہتے ہيں ۔ يہیں بس نہيں ايسا کام يا عمل کرنے سے پہلے جو کہ گناہ ہے اِن شَاء اللہ کہا جاتا ہے جيسے کسی فلم ميں ناچنے والی اپنی کاميابی کيلئے اِن شَاء اللہ کا استعمال کرے

کچھ لوگ ايسے بھی ہيں جو اُس کام کيلئے اِن شَاء اللہ استعمال کرتے ہيں جسے کرنے کا اُن کا ارادہ نہيں ہوتا ۔ اس کے برعکس کوئی کہے “اِن شاء اللہ ميں آؤں گا يا يہ کام کر دوں گا” تو کہا جاتا ہے کہ “تم نے نہيں کرنا”۔ ايک بار ميرے ساتھ ايسا ہوا تو ميں نے پوچھا “آپ کيسے کہہ سکتے ہيں کہ ميں نہيں آؤں گا ؟” جواب ملا “جو کام نہيں کرنا ہوتا اُس کے ساتھ اِن شَاء اللہ لگا ديا جاتا ہے”

اللہ ہميں دين کو سمجھنے اور اس پر عمل کرنے کی توفيق عطا فرمائے

This entry was posted in روز و شب, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

15 thoughts on “چھوٹی چھوٹی باتیں ۔ اِن شَاء اللہ

  1. zaira

    bohat achi baat ki hy aap nay. ALLAH aap ko is k ajar day, or hamain deen ko samajhnay ki tofeek day. Ameen

  2. جاویداقبال

    السلام علیکم ورحمۃ وبرکاتہ،
    جزاک اللہ خیر۔ سعودی عرب میں بھی اکثربات سنی گئی ہےکہ جب سعودی انشاء اللہ کہےتوسمجھوکہ کام میں تاخیرہوگی۔

    والسلام
    جاویداقبال

  3. شھزاد

    سلام – دو ادمی گفتگو کر رہے تھےایک کہ رھا تھا انشااللہ نہی کنفرم بتاو۔۔۔

  4. افتخار اجمل بھوپال Post author

    جاويد اقبال و شہزاد صاحبان
    مثل مشہور ہے کہ جب گيدڑ کی موت آتی ہے تو شہر کا رُخ کرتا ہے ۔ اسی طرح جب مسلمان پر تباہی آنا ہوتی ہے تو وہ دين کا مذاق اُڑاتا ہے اور دراصل وہ اللہ سے مذاق کر رہا ہوتا ہے ۔ نعوذ باللہ من ذالک

  5. بلوُ

    بہت اچھی بات بتائی ہے جی آپ نے،
    ہم لوگ واقعی جب کوئی کام نہیں کرنا ہوتا تو اِن شَاء اللہ ساتھ لگا دیتے ہیں اور یہ سوچتے ہی نہیں کہ ایسا کرنا کتنا غلط ہے

  6. شازل

    آپ نے ایک عام خرابی کی نشاندہی کی ہے
    ہم بہت سے گناہوں سے بچ سکتے ہیں جو کہ روزانہ ہمارے ساتھ پیش آتے ہیں

  7. افتخار اجمل بھوپال Post author

    جاوید اقبال و شہزاد و احمد عرفان شفقت صاحبان
    ہميں دوسروں سے کيا ہماری قوم کا يہ حال ہے کہ اللہ کو مانتے ہيں مگر اللہ کی نہيں مانتے
    ميں عرب دنيا ميں کچھ عرصہ رہا ہوں ۔ اُن کے متعلق ساری باتيں ہمارے لوگوں نے مشہور کی ہوئی ہيں جو سب درست نہيں ہيں ۔ ويسے ميں نے دفاتر ميں کبھی کبھی اُنہيں شاء اللہ بُکرا يا شاء اللہ غُدوا کہتے سُنا تھا يعنی ميں کل کروں گا ۔ ايسا زيادہ تو اُس وقت کہتے جب کہا جائے کہ ابھی کر دو يا آج ہی کر دو

  8. افتخار اجمل بھوپال Post author

    بلو صاحب
    ميں نے اچھی بات بتائی يا نہيں ۔ آپ نے کوئی گڑبڑ کی ہو گی جو آپ کا تبصرہ سپيم ميں سو رہا تھا ۔ ۔ کھينچ کر ادھر لايا ہوں
    :lol:

  9. Tawarish Moskovich

    I totally agree with yasir japani sahab . jab saudiz inshallah kahdayn to samajh lana chahiye kay kaam nahi honay ka.(yeh suni sunai baat nahi zat mushahida hey )
    :) :roll:

  10. افتخار اجمل بھوپال Post author

    یاسر خوامخواہ جاپانی و طوارش ماسکوفخ صاحبان
    مسلمانوں نے جب مسلمانوں والے وصف چھوڑ ديئے تو ان کا من حيث الاُمہ حال بھی تو ديکھ رہے ہيں آپ

  11. عثمان

    اور یہی حال قسم اٹھانے اور وعدہ کرنے کا بھی ہے۔ جس کام میں قسم اٹھائی گئی یا وعدہ کیا گیا۔۔۔سمجھ لو کہ اگلے کی نیت ہی نہیں!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)