حال ۔ ماضی کے آئینے میں

حال

صدرآصف زرداری نے چکوال میں اپنی تیسری تقریر میں کھُل کر اس “سازش” کی نشاندہی کی جس کے بارے میں وہ نوڈیرو اور فیصل آباد کی تقریروں میں بات کررہے تھے ۔
انہوں نے کہا کہ “ہمیں قلم اورسنگینوں سے نہیں ماراجاسکتا ”
اور واضح کیا کہ” ذوالفقار علی بھٹو کو قلم کے ذریعے لکھے جانے والے عدالتی فیصلے کے ساتھ قتل کیا گیا تھا ۔ اب ایسا نہیں ہوگا”
مزید آصف زرداری نے اپنی تقاریر میں کہا کہ وہ اپنے خُسر اور پیپلز پارٹی کے بانی چیئرمین ذوالفقار علی بھٹو کے مِشن کو آگے بڑھانے کی خاطر جان بھی دینے کو تیار ہیں
صدر آصف زرداری ہر تقریر میں کہتے ہیں کہ جمہوریت کی علمبرداری اور اس کی حفاظت کو زندگی کا مشن بنالیا ہے اور اس مشن کے ساتھ ذوالفقارعلی بھٹو کے مشن کا حوالہ بھی دیتے ہیں

ماضی

بینظیر بھٹو نوازشریف کے ساتھ میثاقِ جمہوریت پر دستخط کرچکی تھیں جس کے 36 نکات کا خلاصہ جمہوریت اور ملک میں دیانت دار اور صالح حکمرانی کو فروغ دینا تھا ۔ اس کے بعد سابق صدر جنرل پرویزمشرف اور بینظیربھٹو کے درمیان معاہدہ طے پایا ۔ اس معاہدے کا صرف یہ مقصد تھا کہ جنرل مشرف کو بدستور صدر برقرار رکھاجائے بینظیربھٹو وزیراعظم بن جائیں اور اُن کے شوہر آصف زرداری کے خلاف تمام مقدمات ختم کردیئے جائیں مگر ان کے راستے میں آئین کی دفعات 63,62 حائل تھیں جن کے تحت کوئی بددیانت اور غیر صالح کردار والا شخص نہ اسمبلی میں جاسکتا ہے نہ ہی وزیر ، وزیراعظم یا صدر بن سکتاہے ۔ اس رکاوٹ کو دُورکرنے کے لئے معاہدہ این آراو کی شکل میں سامنے آیا

بینظیر بھٹو نے اپنے وقت کے فوجی ڈکٹیٹر جنرل پرویز مشرف کے ساتھ اس کے نظام حکومت میں شریک کار ہونے کے لئے جو این آر او معاہدہ کیا اس نے میاں نوازشریف کے ساتھ کئے جانے والے میثاق جمہوریت کو اندھیروں میں دھکیل دیا

آصف زرداری کے والد حاکم علی زرداری صاحب نیشنل عوامی پارٹی [اب اے این پی] کے نائب صدر تھے ۔ نیشنل عوامی پارٹی اور ذوالفقار علی بھٹو ایک دوسرے کے سخت دشمن تھے ۔ ذوالفقار علی بھٹو نے اس نیشنل عوامی پارٹی اوراس کے عہدیداروں کو غداری کا مرتکب قراردے کر اے این پی پر پابندی لگادی تھی اور ولی خان سمیت اس پارٹی کے عہدیداروں پر سندھ کے شہر حیدرآباد میں غداری کا مقدمہ چلایا گیا تھا ۔ غداری کے اس جُرم میں ان لوگوں کو موت کی سزادی جا سکتی تھی ۔ یہ مقدمہ 5 جولائی 1977ء کو ابھی زیر سماعت تھا کہ جنرل ضیاء الحق نے ذوالفقار علی بھٹو کی حکومت کا تختہ اُلٹ دیا ور حیدرآباد کیس ختم کرکے ولی خان اور دوسرے عہدیداروں کو رہا کردیا

ولی خان اور آصف زرداری کے والد حاکم علی زرداری صاحب سمیت دوسرے ساتھیوں نے ضیاء الحق کے متذکرہ بالا اقدام کی بھرپور حمائت کی اورپھر مارشل لاء کا مکمل ساتھ بھی دیا

اکتوبر 1958ء میں جب جنرل ایوب خان نے منتخب وزیراعظم فیروز خان نون کی حکومت برطرف کرکے آئین منسوخ کردیا اور تمام اسمبلیاں توڑ کر مارشل لاء نافذ کردیا تو ایک اپنی منشا کی کابینہ بنائی جس کے وزراء میں فوجی جرنیلوں کے بعد سب سے نمایاں نام ذوالفقار علی بھٹو کا تھا جو پہلے مرکزی وزیر برائے قدرتی وسائل بنے پھر وزیر خارجہ اور ایوب خان کی سرکاری کنونشن مسلم لیگ کے سیکرٹری جنرل مقرر ہوئے

ایوب خان کی حکومت کا تختہ جنرل یحییٰ خان نے اُلٹا اور ایوب خان کا آئین اور اسمبلیاں ختم کرکے نیا مارشل لاء نافذ کردیا اورخودچیف مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بن گیا تو ذوالفقار علی بھٹو اس کی کابینہ میں نائب وزیراعظم اور وزیر خارجہ بنے رہے

جب یحیٰ خان کی حکومت ختم ہوئی تو ذوالفقارعلی بھٹو خود چیف مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بن گئے اور مارشل لاء کے تحت ایک پی سی او بھی نافذ کیا اوراس کے ذریعے ڈیڑھ برس تک اپنے مارشل لاء کا قانون چلایا

بعد میں 1973ء کا آئین نافذ کیا مگر 1971ء سے 5 جولائی1977ء کو اُن کی حکومت ختم ہونے تک 6 سالوں میں پورے ملک میں بلدیاتی انتخابات نہیں ہونے دیئے جو کسی بھی جمہوری معاشرے کی بنیاد ہوتے ہیں

بشکریہ ۔ روزنامہ اوصاف

میرا دوسرا بلاگ ” حقیقت اکثر تلخ ہوتی ہے ۔ Reality is often Bitter
” پچھلے ساڑھے پانچ سال سے معاشرے کے کچھ بھیانک پہلوؤں پر تحاریر سے بھر پور چلا آ رہا ہے ۔ اور قاری سے صرف ایک کلِک کے فاصلہ پر ہے

This entry was posted in تاریخ, روز و شب on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)