سافٹویئر چوری اور اسلام

8,563 بار دیکھا گیا

یاسر عمران مرزا صاحب نے سافٹ ویئر کا استعمال جسے Piracy کا نام دیا گیا ہے کے متعلق لکھا اور مبصرین نے زبردست تبصرے کئے ان میں سے دو تبصرے منطقی جواب مانگتے ہیں ۔
ایک ۔ عنیقہ ناز صاحبہ کا کتابوں کے حوالے سے
دوسرا ۔ نعمان صاحب کا سوفٹ ویئر کی استحصالی فروخت کے حوالے سے

اپنا تجربہ اور نظریہ بیان کرنے سے قبل میں پوچھنا چاہتا ہوں کہ

1 ۔ صرف فرنگیوں کے بنائے ہوئے اصولوں یا قوانین کی خلاف ورزی ہی جُرم کیوں ہے جبکہ وہ خود تمام انسانی حدوں کو توڑ کر جسے چاہیں ملیامیٹ کرتے رہتے ہیں ؟
2 ۔ اجارہ داری کا مقابلہ کرنا اگر چوری یا ڈکیتی ہے تو پھر جمہوریت کے نعرے کیوں لگائے جاتے ہیں ؟
3 ۔ اگر ہم بہت دیندار ہیں تو کیا صرف امریکا کے بنائے ہوئے قانون کی خلاف ورزی سے گناہگار بنتے ہیں ؟ اور کیا ہم نے اپنے باقی سارے اوصاف دین کے مطابق ڈھال لئے ہیں ؟
4 ۔ دورِ حاضر میں بہت سی اشیاء کی اصل اور نقل ملتی ہیں ۔ مثال کے طور پر نیشنل کی استری یا مولینکس کا گرائنڈر بلینڈر ۔ اصل کی قیمت اگر 4000 روپے ہے تو نقل 2000 روپے یا کم میں مل رہی ہے ۔ ایسا صرف پاکستان میں نہیں ساری دنیا میں ہے ۔ درمیانی یا کم آمدن والے لوگ اصل کی قیمت ادا نہیں کر سکتے اسلئے نقل خریدتے ہیں ۔ باقی اشیاء کی نقل خریدنا جُرم نہیں پھر امریکی سافٹ ویئر کی نقل خریدنا جُرمِ کیوں ؟
5 ۔ آخر یہ سارا نزلہ پاکستان پر کیوں گرایا جا تا ہے ؟ اور ہم خود ہی اپنے آپ کو امریکا کی استحصالی اجارہ داری میں کیوں جکڑنا چاہتے ہیں ؟

حقیقت کیا ہے ؟
سود خور دنیا کی اجارہ داری اور سودی نظام کے ساتھ ساتھ استحصالی نظام میں دنیا کو جکڑنا ۔ کیا اس استحصال کے خلاف کھڑے ہونا انسانیت کی خدمت نہیں ہو گا ؟ اگر امریکا کی preemptive strategy کے تحت دہشتگردی کے خلاف جنگ اور اپنے بغل بچہ اقوامِ متحدہ کے ذریعہ امریکا کا تسلط نہ ماننے والے ممالک پر تجارتی اور دوسری پابندیاں لگانا درست ہے تو امریکا کے مال کی نقل بنانا کیوں غلط ہے ؟

آپ بیتی

میرا کمپیوٹر سے واسطہ ستمبر 1985ء میں پڑا جب مجھے جنرل منیجر منیجمنٹ انفارمیشن سسٹمز [Management Information Systems] تعینات کر کے انوینٹری منیجمنٹ سسٹم [Inventory Management System] کو کمپیوٹرائز کرنے کا پراجیکٹ دے دیا گیا ۔ ادارے میں موجود تھا آئی بی ایم کا مین فریم [IBM”s Main Frame] کمپیوٹر اور سافٹ ویئر ۔ دونوں کی قیمت ادا کر چکنے کے باوجود ہر ماہ ادائیگی کی جاتی جس کے عوض آئی بی ایم کا ایک نمائندہ ہمارے ادارے کی سیاحت کر کے سب ٹھیک کہہ جاتا ۔ اگر کوئی مسئلہ درپیش ہوتا تو اس کا ہرجانہ علیحدہ ادا کرنا پڑتا ۔ اسی پر بس نہیں ذرا ذرا سی بات کیلئے ہم آئی بی ایم کے محتاج تھے ۔ ہم نے آئی بی ایم کے متوازی آزادی دینے والے ادارے نارسک ڈاٹا سے ناطہ جوڑا ۔ اُن کے ماہرین نے میرے ساتھ بیٹھ کر تمام سافٹ ویئر تیار کی اور اللہ کے فضل سے پاکستان کا سب سے وسیع اور فعال انوینٹری منیجمنٹ سسٹم کمپیوٹرائز ہو کر 1988ء میں بھرپور طور پر چالو ہو گیا

جب مجھے اکتوبر 1988ء میں ایم آئی ایس کا سربراہ بنا دیا گیا تو میں نے آئی بی ایم سے اگلا کنٹریکٹ ماضی کی شرائط پر کرنے سے انکار کر دیا ۔ نتیجہ یہ ہوا کہ آئی بی ایم والے ہمیں چھوڑ کر چلے گئے ۔ ہم نے ایک اور آزاد کمپنی سے رجوع کیا تو آئی بی ایم والوں نے ملک کی اعلٰی سطح پر رابطہ کیا کہ مجھے زیر کر سکیں ۔ اللہ کی مہربانی سے وہ کامیاب نہ ہوئے اور اُن کے بڑے میرے پاس بھاگے آئے اور ایک جدید کمپیوٹر سی ایس پی اور ایس کیو ایل کے ساتھ دینے پر راضی ہو گئے اس شرط پر کہ ماہانہ کرایہ ختم صرف جب ضرورت پڑے مینٹیننس چارجز ہوں گے ۔ اُن دنوں پاکستان میں آئی بی ایم کے سربراہ یوسف صاحب تھے ۔ کمپیوٹر کی وصولی کے وقت سربراہ نثار میمن صاحب تھے جو پرویز مشرف کی حکومت میں وزیر رہے ۔ نثار میمن صاحب عہدہ سنبھالتے ہی واہ تشریف لائے اور مجھ سے ملاقات کر کے خوشی کا اظہار کیا

آئی بی ایم کی مہیا کردہ سافٹ ویئر کا یہ حال تھا کہ ایک فلاپی ڈسک سے 4 بار سافٹ ویئر انسٹال کرنے سے وہ سافٹ ویئر بیکار ہو جاتی تھی چنانچہ آئے دن آئی بی ایم سے نئی فلاپی ڈسکس بڑی قیمت پر خریدنا پڑتی تھیں یعنی ہاتھی کی قیمت میں چیونٹی ۔ ہمارے لوگوں نے کوڈ توڑااور ایک فلاپی ڈسک سے کئی فلاپی ڈسکس تیار کر لیں ۔ اگر امریکی قانون کو ماننا لازم ہوتا تو میں اور میرا سابق ادارہ بہت بڑے مجرم قرار پاتے ۔ گویا نہ میرا یہ بلاگ ہوتا اور نہ اتنے سارے ہونہاروں سے تعارف ہو پاتا

آجکل جسے پائریٹڈ سافٹ ویئر کہا جاتا ہے وہ مفت تو نہیں ملتی ۔ اب جو شخص بازار سے یہ سسستی سافٹ ویئر خرید کر لاتا ہے وہ مجرم کیسے ہوا ؟ مجرم تو وہ ہے جس نے کوڈ توڑ کر نقل بنائی ۔ سب کی اطلاع کیلئے لکھ دوں کہ کوڈ توڑ کر نقل بنانے والے پاکستانی نہيں ہیں بلکہ ان کا تعلق امریکا اور يورپ سے ہے ۔

ایک اہم واقعہ یاد آیا ۔ جب امریکا نے لبیا سے خام تیل خریدنے پر اقوامِ متحدہ کو استعمال کر کے پابندی لگوا دی اُن دنوں میں لبیا میں تھا ۔ امریکا کے تیل بردار جہاز مالٹا کی بندرگاہ پر لنگر انداز ہوتے اور مڈل مين [Middle Man] کے ذریعہ سودے ہوتے ۔ کسی نجی کمپنی کے جہاز لبیا سے تیل لے کر جاتے اور امریکی جہازوں میں ڈال دیتے ۔ اس طرح امریکا مہنگا تیل سستے داموں خریدتا رہا ۔ کیا یہ جعلسازی اور دھوکا نہیں ؟

امریکا اور يورپ والوں کی دیانتداری کا پول ماضی کی تاریخ کھولتی ہے ۔ یونانی مصنّف مارک نے اپنی کتاب لائبر اگنیم میں جس تحقیقی مواد کو یونانی کا لاطینی ترجمہ بتایا تھا بعد کی تحقیق میں ثابت ہو چکا ہے کہ وہ دراصل عربی سے لاطینی ترجمہ تھا ۔ اسی طرح جس اُوزی مشین گن یا مشین پِسٹل پر اسرائیل کی واہ واہ ہوتی ہے وہ دراصل نئی ایجاد نہیں بلکہ چیکوسلواکيا کی سب مشین گن کی نقل یا اس کی ترمیم ہے

یہی حال کتابوں اور تحقیقاتی مقالاجات کا ہے فرنگیوں نے عربی سے ترجمے کر کے اپنے ناموں سے شائع کئے اور جس کا ترجمہ نہ ہو سکا اُن کُتب کو جلا دیا گیا ۔ اپنے ملک کو ہی لے لیجئے ۔ ہندوستان پر ہیراپھیری سے قبضہ کے بعد تمام محققین اور ہنر مندوں کو ہلاک کر دیا گیا ۔ میرے اپنے آباؤ اجداد برطانوی حکومت کی دہشتگردی کا شکار ہوئے

This entry was posted in روز و شب on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

52 thoughts on “سافٹویئر چوری اور اسلام

  1. مون لائیٹ آفریدی

    یہ امریکہ ویورپ سمیت تمام حربی کافر ہیں ۔ ان کا مال ہمارے لیے مال غنیمت ہیں ۔ کیونکہ یہ ہم مسلمانوں پر ہر جگہ حملہ آور ہوئے ہیں ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)