زندگی کی حقیقت

ہر کوئی اپنے دوست سے کہتا ہے “ہم ہمیشہ دوست رہیں گے”۔ یہ وعدہ کتنا دیرپا ہوتا ہے ؟ کبھی کسی نے سوچا ؟

ایک وقت دو بہت گہرے دوست ہوتے ہیں ۔ کچھ عرصہ بعد دوست ہوتے ہیں ۔ مزید کچھ عرصہ بعد صرف ملنا جُلنا رہ جاتا ہے اور پھر کبھی ملتے بھی نہیں

عام طور پر تو ایسے ہوتا ہے کہ اِدھر آمنا سامنا ختم ہوا ۔ اُدھر دوستی ہِرن ہو گئی جسے کہتے ہیں آنکھ اَوجھل پہاڑ اَوجھل

لیکن ہر شخص کو دوست کی ضرورت ہوتی ہے اور دوست کی مدد بھی درکار ہوتی ہے

دوستی کو اگر بے غرض اور مُخلص رکھ کر وقت اور جغرافیہ میں قید نہ کیا جائے تو دوستی کا ہمیشہ قائم رہنا ممکن ہو سکتا ہے ۔ دوست تو ہوتا ہی وہ ہے جو آڑے وقت کام آئے لیکن دوستی کی بنیاد غرض ہو تو پھر ایسا نہیں ہوتا

کبھی کبھی ایسے بے مروت شخص سے بھی واسطہ پڑتا ہے کہ آپ اُس کے آڑے وقت کام آئیں لیکن وہ آپ کا دوست نہ بنے اور بعض اوقات آپ کو زِک پہنچائے ۔ یہ تجربہ بھی ایک لحاظ سے اچھا ہوتا ہے کہ دوست پہچاننے میں مدد دیتا ہے

ہر شخص کی زندگی میں ایسا لمحہ آتا ہے کہ کوئی دوست نہ ہونے کا احساس اُس کیلئے کرخت اور بعض اوقات وبالِ جان بن جاتا ہے
صرف اتنا سوچنا کہ میرا دوست ہے انسان کو بڑی بڑی پریشانیوں سے بچا لیتا ہے یا راحت کا باعث ہوتا ہے

بے لوث بھلائی کیجئے کہ بُرے وقت میں کئی لوگوں کی حقیقی دوستی کا تصور انتہائی خوشگوار اثرات کا حامل ہوتا ہے

سورت ۔ 41 ۔ سُورة فُصِّلَت یا حٰم السَّجْدَہ ۔ آیات 34 و 35 ۔ ۔ ۔ اور نیکی اور بدی برابر نہیں ہو سکتے، اور برائی کو بہتر [طریقے] سے دور کیا کرو اس کے نتیجہ میں وہ شخص کہ تمہارے اور جس کے درمیان دشمنی تھی گویا وہ گرم جوش دوست ہو جائے گا ۔ اور یہ [خوبی] صرف اُنہی لوگوں کو عطا کی جاتی ہے جو صبر کرتے ہیں، اور یہ [توفیق] صرف اسی کو حاصل ہوتی ہے جو بڑے نصیب والا ہوتا ہے

This entry was posted in پيغام, ذمہ دارياں, روز و شب, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

5 thoughts on “زندگی کی حقیقت

  1. ریحان

    قسمت والوں کو نصیب ہوتی ہے صحیح دوستی سر ۔۔ ورنا تو یہاں بندا اپنا خودی کا دوست ہے

  2. کنفیوز کامی

    بچپن کی دوستی ہی پائیدار ہوتی ہے کیوں کے اس وقت انسان خود غرضی اور مطلب پرستی سے پاک ہوتا ہے میرے پچپن کے دوست آج بھی ایسے ہیں جیسے کل تھے لیکن وقت بدلا دوست بھی بدلے زندگی کے نئے تجربے حاصل ہوئے کیوں کے میں نے نئے دوستوں سے بھی ویسا ہی تعلق بنانے کی کوشش کی مگر میں غلط تھا اور یہ دوستی ریت پر بنی تصویر جیسی ثابت ہوئی ساتھ ہی ساتھ نئے دوست بنانے سے بھی ڈر لگنے لگا واقعی آجکل کی دوستی مطلب پرستی کے سوا کچھ نہیں چاہے اوپر سے انسان کتنا ہی مخلص دکھائی دیتا ہو ۔ آپ کی باتیں حقیقت کی آئینہ دار ہیں خوشی اور اطمینان حاصل ہوا شکریہ 8)

  3. افتخار اجمل بھوپال Post author

    کامران صاحب
    ایسا ضروری نہیں ۔ مجھے دوستوں کی قلت ہی رہی ۔ اس وقت جو میرے دو بہتریں دوست ہیں ان میں سے ایک سے پہلی ملاقات انجنیئرنگ کالج میں ہوئی لیکن دوستی کا آغاز 1975ء میں ہوا ۔ دوسرے سے 1986ء میں پہلی ملاقات ہوئی جو آہستہ آہستہ دوستی میں تبدیل ہو گئی ۔

  4. جاوید گوندل ، بآرسیلونا ۔ اسپین

    چاہنے والے بہت ہوتے ہیں۔ مگر دوست بہت کم بلکہ ندارد۔جو آپ کا دکھ سمجھے درد جانے ۔ آپ کی کیفیات کو سمجھے۔مدد نہ کرسکے کہ اس کے بس سے باہر ہو تو کم ازکم دو بول تسلی کے دے سکے۔ دوست وہ ہوتا ہے جو آپ کی آدہی بات سے آپ کی پوری بات سمجھ جائے۔

  5. DuFFeR - ڈفر

    مقدر والوں کو ملتے ہیں جی دوست
    اور میں تو اس معاملے میں بڑا خوش نصیب ہوں
    آنکھ اوجھل ہو کر ہماری دوستی پر برسوں میں بھی فرق نہیں پڑتا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)