ثقافت ۔ تغیّر پذیر یا جامد

ثقافت کے لُغوی معنی میں بیان کر چکا ہوں ۔ آج ثقافت کی تاریخ و صحت کا جائزہ لیتے ہیں ۔ اگر کہا جائے کہ ہندوؤں کی ثقافت میں ناچ گانا شامل ہے تو یہ درست ہے لیکن ہندوؤں کیلئے بھی یہ نہیں کہا جا سکتا کہ اُن کی ثقافت ناچ گانا ہے کیونکہ ناچ گانا ان کی ثقافت کا صرف ایک جُزو ہے اور ان کی ثقافت میں کئی اور عادات بھی شامل ہیں ۔ ناچ گانا پوجا پاٹ کا حصہ بنا دینے کی وجہ سے ہندوؤں کی ثقافت میں شامل ہو گیا اور یہ ناچ گانا وہ بھی نہیں ہے جو کہ مووی فلموں میں دکھایا جاتا ہے ۔ مسلمان کیلئے دین اول ہے اسلئے مسلمانوں کی ثقافت میں دین کا لحاظ لازمی ہے لیکن میرے اکثر ہموطن مسلمان ہوتے ہوئے ثقافت کو ناچ ۔ گانا ۔ تمثیل ۔ مصوّری ۔ بُت تراشی وغیرہ ہی سمجھتے ہیں

عام طور پر جو لوگ ثقافت پر زور دیتے ہیں اُن میں سے کچھ کے خیال میں شاید ثقافت ساکت و جامد چیز ہے اور وہ اسے موہنجو ڈارو کے زمانہ میں پہنچا دیتے ہیں ۔ جبکہ کچھ لوگ ثقافت کو ہر دم متغیّر قرار دیتے ہیں ۔ یہ دونوں گروہ اپنے آپ کو جدت پسند ظاہر کرتے ہیں ۔ مؤخرالذکر ثقافت کو اپنے جسم تک محدود رکھتے ہیں یعنی لباس ۔ محفل جمانا ۔ تمثیل ۔ ناچ گانا وغیرہ ۔ لُطف کی بات یہ ہے کہ ثقافت عوام کی اکثریت کا ورثہ اور مرہُونِ منت ہے جنہیں ثقافت کی بحث میں پڑنے کا شاید خیال بھی نہیں ہوتا یا جنہوں نے کبھی ثقافت پر غور کرنے یا اسے اُجاگر کرنے کی دانستہ کوشش نہیں کی

ثقافت ایک ایسی خُو ہے جو اقدار کی مضبوط بنیاد پر تعمیر ہوتی ہے ۔ میں ایک عام فہم مگر کراہت آمیز مثال دینے سے قبل معذرت خواہ ہوں کہ شاید کسی کے ذہن پر ناگوار گذررے ۔ یورپ اور امریکہ میں عورت اور مرد کا جنسی اختلاط عام ہے اور عرصہ دراز سے ہے ۔ کسی یورپی یا امریکن سے پوچھا جائے کہ کیا یہ جنسی اختلاط آپ کی ثقافت کا حصہ ہے تو وہ کہے گا کہ “نہیں ایسا نہیں ہے” ۔ اس کے برعکس کچھ ایسی عادات ہیں جسے اُنہوں نے غیروں سے اپنایا ہے مثال کے طور پر آجکل جسے ٹراؤزر یا پینٹ کہتے ہیں یہ دراصل منطلون یا منطالون ہے جسے عربوں نے گھوڑ سواری بالخصوص جنگ کے دوران کیلئے تیار کیا تھا ۔ یہ اب یورپ اور امریکہ کی ثقافت کا حصہ ہے گو اس کی شکل اب بدل چکی ہے اور اُن لوگوں ثقافت کا حصہ بن چکی ہے

اسی طرح کچھ کھانے ہیں جو اب یورپی اور امریکی ثقافت کا حصہ سمجھے جاتے ہیں لیکن ایشیا سے نقل کئے گئے ۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ان میں سے کچھ اب ایشیا کی بجائے یورپ یا امریکہ کا خاصہ تصور ہوتے ہیں ۔ دورِ حاضر کا برگر جرمنی کا ہیمبُرگر تھا کیونکہ اسے ہیمبُرگ میں کسی شخص نے بنانا شروع کیا تھا ۔ اس سے قبل اس کا نام وِمپی تھا اور ترکی اور اس کے قریبی ایشیائی علاقہ میں بنایا جاتا تھا ۔ اُس سے پہلے یہ منگولوں کا سفری کھانا تھا ۔ شیش کباب جسے ولائیتی [یورپی] کھانا سمجھ کر کھایا جاتا ہے درصل سیخ کباب ہی ہے جو کہ ترکی کا کھانا تھا

ہندو عورتیں ایک ڈیڑھ گز چوڑی چادر پیچھے سے سامنے کی طرف لا کر داہنے والا سرا بائیں کندھے اور بائیں والا سرا داہنے کندھے کے اُوپر لے جا کر گردن کے پیچھے باندھ لیتی تھیں اور یہی ان کا لباس تھا ۔ لباس میں ساڑھی جسے کئی لوگ ہندوؤں کا پہناوا یا ثقافت کہتے ہیں ہندوؤں نے مسلمانوں سے نقل کیا جس کو مختلف اشکال دی گئیں اور عُریاں بھی بنا دیا گیا ۔ دراصل یہ عرب بالخصوص افریقی مسلمانوں کا لباس ساری تھا جو کہ مسلمان عورتیں بطور واحد لباس نہیں بلکہ اپنے جسم کے خد و خال چھپانے کی خاطر عام لباس کے اُوپر لپیٹ لیتی تھیں ۔ یہ ساری اب بھی افریقہ کے چند ملکوں بالخصوص سوڈان میں رائج ہے

کسی گروہ یا قوم کی زبان یا بولی بھی ثقافت کا حصہ ہوتی ہے اور ذریعہ تعلیم بھی ۔ ایک دلچسپ بات یہ ہے کہ جو ہندسے عربوں نے بنائے وہ انگریزی بولنے والوں نے اپنا لئے اور اب جو ہندسے عربی میں استعمال ہوتے ہیں اُنہوں نے ہندوستان میں جنم لیا تھا

جو یورپ میں رومن ہندسے رائج تھے وہ لکھنے اور سمجھنے مشکل تھے

I – – II – – III – – IV – – V – – VI – – VII – – VIII – – IX – – X
XI – – XII – – XIII – – XIV – – XV – – XVI – – XVII – – XVIII – – XIX – – XX
XXI – – XXIX – – XXX – – XL – – L – – LX – – LXX – – LXXX – – XC – – C

جو ہندسے عربوں نے تخلیق کئے تھے لیکنیورپ اور امریکہ نے اپنا لئے یہ ہیں

1 – – 2 – – 3 – – 4 – – 5 – – 6 – – 7 – – 8 – – 9 – – 10
11 – – 12 – – 13 – – 14 – -15 – – 16 – -17 – – 18 – – 19 – – 20
21 – -29 – – 30 – – 40 – – 50 – – 60 – – 70 – – 80 – – 90 – – 100

جن ہندسوں نے ہندوستان میں جنم لیا اور عربوں نے اپنا لئے ۔

۱ ۔ ۔ ۔ ۲ ۔ ۔ ۔ ۳ ۔ ۔ ۔ ۴ ۔ ۔ ۔ ۵ ۔ ۔ ۔ ۶ ۔ ۔ ۔ ۷ ۔ ۔ ۔ ۸ ۔ ۔ ۔ ۹ ۔ ۔ ۔ ۱۰
۱۱ ۔ ۔ ۔ ۱۲۔ ۔ ۔ ۱۳ ۔ ۔ ۔ ۱۴ ۔ ۔ ۔ ۱۵ ۔ ۔ ۔ ۱۶ ۔ ۔ ۔ ۱۷ ۔ ۔ ۔ ۱۸ ۔ ۔ ۔ ۱۹ ۔ ۔ ۔ ۲۰
۲۱ ۔ ۔ ۔ ۲۹۔ ۔ ۔ ۳۰ ۔ ۔ ۔ ۴۰ ۔ ۔ ۔ ۵۰ ۔ ۔ ۔ ۶۰ ۔ ۔ ۔ ۷۰ ۔ ۔ ۔ ۸۰ ۔ ۔ ۔ ۹۰ ۔ ۔ ۔ ۱۰۰

متذکرہ بالا تو ثقافت کے وہ اجزاء ہیں جو تبدیل ہوتے رہتے ہیں اور ان کے تبدیل ہونے میں کوئی قباحت نہیں ہے اور انسانی ب
ہتری کیلئے ان میں تبدیلی ہوتے رہنا چاہیئے ۔ مگر اقدار میں وہ وصف شامل ہیں جن کی بنیاد خالقِ کائنات نے اپنی مخلوق کی نہتری کیلئے مقرر کر دی ہے ۔ کمپیوٹر کو فی زمانہ سب جانتے ہیں کہ بہت کارآمد آلہ ہے اور متعدد قسم کے کام سرانجام دیتا ہے مگر یہ سب کام کمپیوٹر کے خالق کے مقرر کردہ ہیں ۔ کمپیوٹر ان مقررہ حدود سے باہر نہیں جاتا ۔ اگر ایسا کرنے کی کوشش کی جائے تو کمپیوٹر خراب ہو جاتا ہے یا خراب ہونے کا اندیشہ ہوتا ہے ۔ یہی حال انسان کا ہے ۔ فرق یہ ہے کہ انسان کے خالق نے انسان کو کچھ اختیار دیا ہوا ہے لیکن ساتھ ہی انسان کا نصب العین بھی مقرر کر دیا ہے اور اس پر واضح کر دیا ہوا ہے کہ غلط عمل کا نتیجہ اچھا نہیں ہو گا ۔ اس لئے انسان کیلئے لازم ہے کہ انسانیت یا خود اپنی بہتری کیلئے اُن اقدار کو جو اس کی ثقافت کا اہم حصہ ہیں نہ بدلے اور ان پر قائم رہے ۔ وہ اقدار ہیں سلوک ۔ عدل ۔ عبادت ۔ تعلیم ۔ انتظام ۔ وغیرہ

میرا اس بلاگ سے مُختلِف انگريزی میں بلاگ مندرجہ ذیل یو آر ایل پر کلِک کر کے يا اِسے اپنے براؤزر ميں لکھ کر پڑھيئے

Reality is Often Bitter – – http://iabhopal.wordpress.com

– – حقیقت اکثر تلخ ہوتی ہے

This entry was posted in ذمہ دارياں, روز و شب, معاشرہ on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

3 thoughts on “ثقافت ۔ تغیّر پذیر یا جامد

  1. محمد سعد

    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ

    ۔۔۔[ ۷ کا ہندسہ انگریزی کے اُلٹے وی کی طرح لکھا جاتا ہے جسے لکھنے کا میرے پاس بندوبست نہیں ہے]۔۔۔

    یہاں پر شاید “اُلٹے” اضافی لگ گیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)