زرداری جی ۔ ہور چُوپَو

کراچی میں 25 نومبر 2008ء کو دفاعی نمائش آئیڈِیاز 2008ء کے دوران میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پاک فضائیہ کے سربراہ ایئرمارشل تنویرمحمود احمد نے کہا کہ پاک فضائیہ جاسوس طیاروں اور میزائل حملوں کو روکنے کی صلاحیت رکھتی ہے ۔ یہ فیصلہ حکومت کو کرنا ہے کہ وہ کب ہماری [پاک فضائیہ کی] صلاحیتوں سے فائدہ اٹھاتی ہے یا حملہ کرنے والوں سے جنگ کیلئے تیار ہوتی ہے ۔

اُنہوں نے مزید کہا کہ آئیندہ چند سالوں میں پاک فضائیہ کے اکثر لڑاکا طیارے اپنی طبعی عمر پوری کرلیں گے جس کے بعد اس کمی کو جے ایف 17تھنڈر طیاروں [PAC JF-17 Thunder, also known as the Chengdu FC-1 Fierce Dragon] سے پورا کیا جائے گا ۔ پاک فضائیہ کے لڑاکا طیارے ہر قسم کے وار ہیڈ لے جانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

This entry was posted in خبر, سیاست on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

4 thoughts on “زرداری جی ۔ ہور چُوپَو

  1. محمد ریاض شاہد

    محترم بھوپال صاحب
    اسلام علیکم
    میری ناقص راے میں امریکہ اور اسراییل اور ہندو سے معرکہ پاکستان کا مقدر ہے جس میں ہم اللہ کے فضل سے نقصان کے بعد کا میاب ہوں گے۔وقت کا معلوم صرف اللہ کو ہے مگر شاید وہ وقت آن پہنچا ہے – ہماری کوشش ہونی چاہیے کہ ہم ذاتی طور پر کوی ایسا کام نہ کریں جس سے پاکستان کمزور ہو بلکہ اس وقت کی تیاری بھی شروع کر دینا چاہیے۔ نبی پاک صلی علیہ کا جب انتقال ہوا تو آپْ کا ترکہ صرف اور صرف جنگی ہتھیاروں پر مشتمل تھا۔ اب وقت ہے کہ ہم اپنی ذاتی ذندگی میں سادگی اپناییں۔اپنے بچوں کو آگاہ کریں کہ ہماری بزرگ کیا تھے۔ٹیپو کون تھا اور کیؤں اس کی تصویر آج بھی ناسا کے صدر مقام میں لگی ہوی ہے۔ قاید اعظم کا کردار کیا تھا اور وہ ہمیں جدید دنیا میں کہاں دیکھنا چاہتے تھے۔ اور اقبال کی شاعری کس طرح قرآن کی آیات کی جدید زمانے کے حساب سے تشریح کرتی ہے۔ ہمیں اپنے کردار کو مضبوط بنانے کی طرف بہت توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ گورنمنٹ کو برا بھلا کہنے سے کچھ نہیں ہو گا۔ بلکہ ہمیں مولانا حسرت موہانی کی طرح اپنے جسم ناتواں میں جرات کردار پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔

  2. ڈفر

    قدیر احمد @ : اگر بیٹھے ہی رہیں گے تو میرے خیال میں یہ کوئی نقصان کا سودا نہیں، کیوں؟
    اگر لمّے پَے گئے تو :shock: ڈر لگتا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)