ج جنجوعہ زندہ ہو گیا

جنجوعہ کے نام سے بلاگر واقف ہونگے ۔ وطن واپسی پر حالات میں گم ہو گئے تھے ۔ اب اُنہوں نے ایک تحریر لکھی ہے جس میں مجھے مندرجہ ذیل زیادہ اچھے لگے ۔

ہے حکم ربِ جلال کا .
اُترے گا طوق غلامی کا .
اور اب دور سُنہرا آئے گا .
محکوموں کی شاہانی کا .
ہم اہلِ صفا، مردودِ حرم .
بس چاہتے ہیں انصاف ہو .
تجھ سے کہتے ہیں اے رب .
گھر جمھوریت کا آباد ہو .
اے رب . ابر کرم کا برسادے .
تو ہی اپنا جلوہ دکھلا دے .
جو ہاتھ اُٹھے تیری خلقت پر .
اُسے نشان عبرت کا بنا دے .
گر نہ ملی ۔ جو برحق ہے .
اذانِ جبریل و پیمبر ہے .
پڑھ لو نوشتہءِ دیوار کو .
ہم چھین کے لیں گے آزادی .

This entry was posted in خبر on by .

About افتخار اجمل بھوپال

رہائش ۔ اسلام آباد ۔ پاکستان ۔ ۔ ۔ ریاست جموں کشمیر کے شہر جموں میں پیدا ہوا ۔ پاکستان بننے کے بعد ہجرت پر مجبور کئے گئے تو پاکستان آئے ۔انجنئرنگ کالج لاہور سے بی ایس سی انجنئرنگ پاس کی اور روزی کمانے میں لگ گیا۔ ملازمت کے دوران اللہ نے قومی اہمیت کے کئی منصوبے میرے ہاتھوں تکمیل کو پہنچائے اور کئی ملکوں کی سیر کرائی جہاں کے باشندوں کی عادات کے مطالعہ کا موقع ملا۔ روابط میں "میں جموں کشمیر میں" پر کلِک کر کے پڑھئے میرے اور ریاست جموں کشمیر کے متعلق حقائق جو پہلے آپ کے علم میں شائد ہی آئے ہوں گے ۔ ۔ ۔ دلچسپیاں ۔ مطالعہ ۔ مضمون نویسی ۔ خدمتِ انسانیت ۔ ویب گردی ۔ ۔ ۔ پسندیدہ کُتب ۔ بانگ درا ۔ ضرب کلِیم ۔ بال جبریل ۔ گلستان سعدی ۔ تاریخی کُتب ۔ دینی کتب ۔ سائنسی ریسرچ کی تحریریں ۔ مُہمْات کا حال

6 thoughts on “ج جنجوعہ زندہ ہو گیا

  1. اظہرالحق

    پڑھ لو نوشتہءِ دیوار کو .
    چھین کے لیں گے آزادی

    پہلا والا مصرع نعرے میں فٹ نہیں آ رہا ۔ ۔ ۔ کوئی دوسرا مصرع لگانا پڑے گا جیسے

    اب کہیں گے ہر دیوار کو
    چھین کے لے گے آزادی !!!

    کیا خیال ہے ؟؟ ۔ ۔ ۔ ویسے آج کل یہ نعرے کافی “اِن“ ہیں ۔ ۔۔

  2. ME

    Jinab rule yeah hai kay jesa moon wesee chapair, ya jesee rooh wesay frishtay..

    Allah kay hukum say jesay moon hain wesee chupairain maaree ja rahee hain….

    baqee aap khud smajhdaar hain…ummed hai

  3. اجمل

    اظہرالحق صاحب
    جیسا کہ میں نے لکھا ہے یہ شعر میرے نہیں ہیں اسلئے بہتر ہو گا کہ آپ دیئے ہوئے رابطہ کے ذریعہ مصنف کے بلاگ پر مشورہ دے دیں ۔

    مسٹر می
    جو آپ نے تحریر کیا ہے کہ جیسا منہ ویسی چپیڑ یا جیسی روح ویسے فرشتے ۔ اللہ سُبْحَانُہُ وَ تَعَالٰی کی زبان سے ان کا دُور کا تعلق بھی نہیں ۔ یہ لوگوں نے اپنی انا کی تسکین کیلئے بنائے ہوئے ہیں ۔ البتہ اللہ سُبْحَانُہُ وَ تَعَالٰی نے فرمایا ہے وَ لَیْسَ لِلاِنْسَانِ اِلّا مَا سَعَی یعنی بغیر کوشش کو انسان کو کچھ نہیں ملتا ۔ اسے یوں بھی کہا جا سکتا ہے کہ انسان کو وہی ملتا ہے جس کیلئے وہ کوشش کرے ۔ دیگر آپ نے تبصرہ کچھ بے محل نہیں کر دیا ۔

  4. ME

    Ajmal sahib aap ka ilma zara meree tara naqis lugta hai. Is tra ka aap nay nahain para kay ‘log jis tara kai hutay hain khuda unpay aisay hee hakim laga deta hai’. Galban nahain para.

  5. اجمل

    مسٹر می
    اس میں کوئی شک نہیں کہ كرآن شریف کے مطابق جیسی قومیں ہوں اُن پر ویسے ہی حاکم مسلط کر دئیے جاتے ہیں ۔ اسی لئے اچھے لوگوں پر ظالم یا ظالموں کے خلاف جہاد فرض کیا گیا اور جہاد کا نام سن کر آپ کو مرچیں لگتی ہیں ۔ آپ کے ساتھ وہی ہوا ۔ خود آپ اپنے دام میں صیّاد آ گیا ۔
    لیکن آپ کی سمجھ میں تو آج تک یہ بات نہیں آ سکی کہ تبصرہ کیا کرنا ہے اور کس جگہ پر کرنا ہے ۔ مندرجہ بالا شعر میں نے نہیں لکھے میں نے اس بالگر کی طرف توجہ دلائی ہے جو کئی ماہ سے غیر حاضر تھا ۔ اگر آپ نے ان اشعار پر تبصرہ کرنا ہی ہے تو اس کے بلاگ پر جا کر کریں ۔ بے جگہ کیوں اپنا وقت ضائع کر رہے ہیں ۔

  6. Jeem

    Asal main yeay ‘Hum Chheen kay’ hai. I cannot login anymore to change or post comments. Yeah tau hona tha inqlabee Narah Haq kay baad.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

:wink: :twisted: :roll: :oops: :mrgreen: :lol: :idea: :evil: :cry: :arrow: :?: :-| :-x :-o :-P :-D :-? :) :( :!: 8-O 8)